سرکار دو عالم صلی الله علیہ و آلہ و سلم کی ۹ تلواریں

ان تلواروں کی تصویریں ’محمد حسن محمد التھامی‘ کی محفوظات سے لی گئی ہیں۔ اس نے یہ تصاویر 1312ھ بمطابق 1929 عـ میں اپنے مقالے (رسول اللہ صلی الله علیہ و آلہ و سلم کی تلواریں اور سامانِ حرب) کے سلسلہ میں بنائیں۔

البتّار

یہ تلوار سرکارِ  دو عالم نبی اکرم حضرت محمد صلی الله علیہ و آلہ و سلم کو  یثرب کے یہودی قبیلے (بنو قینقاع ) سے مالِ غنیمت کے طور پر حاصل ہوئی۔ اس  تلوار کو (سیف الانبیاء) نبیوں کی تلوار بھی کہا جاتا ہے۔ اس تلوار پر حضرت داؤود علیہ السلام، سلیمان علیہ السلام، ہارون علیہ السلام، یسع علیہ السلام، زکریا علیہ السلام، یحیی علیہ السلام، عیسی علیہ السلام اور محمد صلی الله علیہ و آلہ و سلم کے اسماء مبارکہ کنندہ ہیں۔ یہ تلوار حضرت داؤود علیہ السلام کو اس وقت مالِ غنیمت کے طور پر حاصل ہوئی جب ان کی عمر بیس سال سے بھی کم تھی۔ اس تلوار پر ایک تصویر بھی بنی ہوئی ہے جس میں حضرت   داؤود علیہ السلام کو جالوت کا سر قلم کرتے دکھایا گیا ہے جو کہ اس تلوار کا اصلی مالک تھا۔ تلوار پر  ایک ایسا نشان بھی بنا ہوا ہے جو بتراء شہر کے  قدیمی عرب باشندے (البادیون) اپنی ملکیتی اَشیاء پر بنایا کرتے تھے۔ بعض روایات میں یہ بات بھی ملتی ہے کہ یہی وہ تلوار ہے جس سے حضرت عیسیٰ علیہ السلام  اس دنیا میں واپس آنے کے بعد اللہ کے دشمن ’کانے دجال‘ کا خاتمہ کریں گے اور دشمنانِ اسلام سے جہاد کریں گے۔اس تلوار کی لمبائی 101 سینٹی میٹر ہے ۔اور آجکل یہ تلوار ترکی کے مشہورِ زمانہ عجائب گھر ’توپ کیپی۔استنبول‘ میں محفوظ ہے۔

المأثور

یہ تلوار حضور پاک صلی الله علیہ و آلہ و سلم کو  اپنے والد ماجد کی وراثت کے طور پر نبوت کےاعلان سے قبل  ملی تھی۔ یہ تلوار ایک اور نام ’مأثور الفجر‘ سے بھی مشہور ہے۔ آپ صلی الله علیہ و آلہ و سلم نے جب یثرب کی طرف ہجرت فرمائی تو یہی تلوار آپ صلی الله علیہ و آلہ و سلم کے پاس تھی۔ بعد میں آپ صلی الله علیہ و آلہ و سلم نے یہ تلوار بمع دیگر چند آلاتِ حرب حضرت علی علیہ السلام کو عطا فرما دیئے تھے۔ اس تلوار کا دستہ سونے کا بنا ہوا ہے اور دونوں اطراف سے مڑا ہوا ہے۔ مزید خوبصورتی کیلئے اس پر زمرد اور فیروزے جڑے ہوئے ہیں۔ اس تلوار کی لمبائی 99 سینٹی میٹر ہے  ہے  اور آجکل یہ تلوار بھی  ترکی کے مشہورِ زمانہ عجائب گھر ’توپ کیپی۔استنبول‘ میں محفوظ ہے۔

الحتف

یہ تلوار  بھی  نبی پاک صلی اللہ علیہ و آلہ و سلم کو یثرب کے یہودی قبیلے بنو قینقاع سے مالِ غنیمت کے طور پر حاصل ہوئی۔ یہ تلوار حضرت داؤود علیہ السلام کے مبارک ہاتھوں سے بنی ہوئی ہے جنہیں اللہ تعالٰی نے لوہے کے سازوسامان خاص طور پر ڈھالیں، تلواریں اور دیگر آلالتِ حرب بنانے میں خصوصی مہارت عطا فرمائی تھی۔ حضرت داؤود علیہ السلام نے اس تلوار کو ’بتّار‘ سے ملتا جلتا لیکن سائز مین اُس سے بڑا بنایا۔ یہ تلوار یہودیوں کے قبیلے لاوی کے پاس اپنے آباء و اجداد بنو اسرائیک کی نشانیوں کے طور پر نسل در نسل محفوظ چلی آ رہی تھی حتٰی کہ آخر میں یہ ہمارے پیارے نبی ﷺ کےمبارک ہاتھوں  میں مالِ غنیمت کے طور پر پونہچی۔ اس تلوار کی لمبائی 112 سینٹی میٹر اور چوڑائی 8 سینٹی میٹر ہے۔اور آجکل یہ تلوار بھی  ترکی کے مشہورِ زمانہ عجائب گھر ’توپ کیپی۔استنبول‘ میں محفوظ ہے۔

الذوالفقار

یہ تلوار  ہمارے پیارے   نبی پاک صلی الله علیہ و آلہ و سلم کو غزوہِ بدر میں مالِ غنیمت کے طور پر حاصل ہوئی۔ تاریخی مطالعہ سے یہ بات سامنے آتی ہے کہ بعد میں  آپ صلی الله علیہ و آلہ و سلم نے یہ تلوار حضرت علی علیہ السلام کو عطا فرما دی تھی۔ غزوہِ اُحد میں حضرت علی علیہ السلام اسی تلوار کے ساتھ میدانِ جنگ میں اُترے اور مشرکینِ مکہ کے کئی بڑے بڑے سرداروں کو واصلِ جہنم کیا۔ اکثر حوالے اس بات کا اشارہ دیتے ہیں کہ تلوار خاندانِ حضرت علی علیہ السلام میں باقی رہی۔ اس تلوار کی وجہِ شہرت یا تو دو دھاری ہونے کی وجہ سے ہے یا پھر اس پر بنے ہوئے ہوئے دو نوک نقش و نگار کی وجہ سے ہے اور آجکل یہ تلوار  بھی  ترکی کے مشہورِ زمانہ عجائب گھر ’توپ کیپی۔استنبول‘ میں محفوظ ہے۔

الرسّوب

یہ تلوار  ہمارے پیارے   نبی پاک صلی الله علیہ و آلہ و سلم  کی ملکیتی 9 تلواروں میں سے ایک تلوار ہے۔ خاندانِ رسول صلی الله علیہ و آلہ و سلم  میں یہ تلوار بالکل ویسے ہی محفوظ منتقل ہوتی ریہ جس طرح ’تابوت العہد‘ بنو اسرئیل میں خاندان در خاندان محفوظ رہا اور نسل در نسل منتقل ہوتا رہا۔ تلوار پر سنہری دائرے بنے ہوئے ہیں جن پر حضرت جعفر الصادق  علیہ السلام کا اسم گرامی کنندہ ہے۔ اس تلوار کی لمبائی 140 سینٹی میٹر ہے اور آجکل یہ تلوار  بھی  ترکی کے مشہورِ زمانہ عجائب گھر ’توپ کیپی۔استنبول‘ میں محفوظ ہے۔

المِخذم

اس تلوار کے حوالے سے دو مختلف آراء سامنے آتی ہیں۔ اول یہ تلوار رسول اللہ صلی الله علیہ و آلہ و سلم  نے حضرت علی علیہ السلام کو عطا فرمائی اور بعد میں اولادِ علی علیہ السلام میں وراثت کے طور پر نسل در نسل چلتی رہی۔ دوئم یہ  تلوار سیدنا علی علیہ السلام کو اہلِ شام کے ساتھ ایک معرکے میں مالِ غنیمت کے طور پر حاصل ہوئی۔ اس تلوار پر  ’زین الدین العابدین‘ کے الفاظ کنندہ ہیں۔ اس تلوار کی لمبائی 97 سینٹی میٹر ہے۔  اور آجکل یہ تلوار بھی  ترکی کے مشہورِ زمانہ عجائب گھر ’توپ کیپی۔استنبول‘ میں محفوظ ہے۔

القضیب

یہ تلوارنحیف اور بہت کم چوڑائی والی ہے بلکہ اسی طرح جس طرح کسی تنگ راستے کی مثال دی جاتی ہے۔ یہ تلوار  سرکارِ  دو عالم صلی الله علیہ و آلہ و سلم کے ہمراہ دفاع یا رفیقِ سفر کے طور پر تو ضرور موجود رہی مگر اس تلوار سے کبھی کوئی جنگ نہیں لڑی گئی۔ تلوار پر چاندی کے ساتھ ’لا الٰہ الا اللہ محمد رسول اللہ ۔ محمد بن عبداللہ بن عبد المطلب‘ صلی الله علیہ و آلہ و سلم  کے الفاظ کنندہ ہیں۔ کوئی ایسا تاریخی حوالہ اس بات کی طرف اشارہ نہیں  دیتا  کہ تلوار کسی طور سے بھی آپ صلی الله علیہ و آلہ و سلم  کی حیاتِ طیبہ میں کسی جنگ میں استعمال ہوئی۔ تلوار ہمیشہ آپ صلی الله علیہ و آلہ و سلم  کے گھر میں موجود رہی۔ لیکن فاطمیون کے عہدِ خلافت میں اس تلوار کو استعمال کیا گیا۔ اس تلوار کی لمبائی 100 سینٹی میٹر ہے اور اس تلوار کی  میان کسی جانور کی کھال کی بنی ہوئی ہے۔ اور آجکل یہ تلوار بھی  ترکی کے مشہورِ زمانہ عجائب گھر ’توپ کیپی۔استنبول‘ میں محفوظ ہے۔

العضب

یہ تلوار (العضب یعنی تیز دھار والی) پیارے حضرت محمد رسول اللہ صلی الله علیہ و آلہ و سلم  کو  آپ صلی الله علیہ و آلہ و سلم  کے صحابی سعد بن عبادہ الانصاری نے غزوہ اُحد سے قبل تحفہ دی تھی۔ آپ صلی الله علیہ و آلہ و سلم نے اُحد والے دن یہی تلوار معروف صحابی ابو دجانہ الانصاری کو عطا فرما دی تاکہ وہ میدانِ جنگ میں اُتر کر اللہ اور اُس کے رسول صلی الله علیہ و آلہ و سلم  کے دشمنوں پر اسلام کی قوت و عظمت کا مظاہرہ کریں۔ آجکل یہ تلوار مصر کے شہر قاہرہ کی مشہور جامع مسجد الحسین بن علی علیہما السلام میں محفوظ ہے۔  

القلعی

لفظ قلعی کا تعلق یا تو شام کے کسی علاقہ سے دکھائی دیتا ہے یا پھر ہندوستان اور چین کے کسی سرحدی علاقے سے ہے۔ جب کہ ایک طبقہ کے علماء یہ بھی دلیل دیتے ہیں کہ کیونکہ قلعی ایک قسم کی دھات کا نام ہے جو دیگر دھاتی چیزوں  کو چمکانے یا ان پر پالش چڑھانے کے کام آتی ہے اس تلوار کی وجہ تسمیہ ہو سکتی ہے۔ یہ تلوار ان تین تلواروں میں سے ایک ہے جو ہمارے پیارے نبی  حضرت محمد رسول اللہ صلی الله علیہ و آلہ و سلم کو  یثرب کے یہودی قبیلے بنو قینقاع سے جنگ میں مالِ غنیمت کے طور پر حاصل ہوئی تھیں۔ اس کے علاوہ اس تلوار کے بارے میں یہ بات بھی کہی جاتی ہے کہ حضور پاک صلی الله علیہ و آلہ و سلم کے دادا حضرت عبد المطلب نے اس تلوار  اور سونے کے بنے ہوئے دو ہرنوں کو زمزم کے کنویں سے نکلوایا تھا جو کہ قبیلہ  جرہم الحمیریہ (حضرت اسماعیل علیہ السلام کے سسرالی قبیلے) نے یہاں پر ایک زمانہ قبل دفن کئے تھے۔ بعد میں حضرت عبد المطلب علیہ السلام نے اس تلوار کو بمعہ دیگر قیمتی سامان بیت اللہ میں حفاظت سے رکھوا دیا۔ تلوار پر دستے کے قریب  یہ الفاظ کنندہ ہیں (ھٍذہ السیف المشرفی لبیت محمد رسول اللہ صلی الله علیہ و آلہ و سلم: یہ تلوار محمد رسول اللہ صلی الله علیہ و آلہ و سلم کے گھرانے کی عزت کی علامت ہے)۔  تلوار کی خوبصورت میان اسکو دوسری تلواروں میں ایک نمایاں مقام دیتی ہے۔ اس تلوار کی لمبائی 100 سینٹی میٹر ہے اور آجکل یہ تلوار بھی  ترکی کے مشہورِ زمانہ عجائب گھر ’توپ کیپی۔استنبول‘ میں محفوظ ہے۔

حسب سابق  اس مضمون کو عربی سے اردو میں ترجمہ کرکے آپ تک پہنچایا ہے،  بدلے میں آپکی دعاؤں کا طالب ہوں۔ محمد سلیم/شانتو-چائنا