یمن کا المیہ؛

آیت اللہ صافی‌گلپائگانی کا کھلا خط او آئی سی کے نام

مرجع تقلید آیت اللہ صافی نے حقوق انسانی کے نام نہاد مدافع تنظیموں کی مجرمانہ خاموشی کی مذمت کرتے ہوئے اسلامی کانفرنس تنظیم سے اپیل کی ہے کہ فوری طور پر مداخلت کرکے یمن میں ہونے والی جارحیت اور ظلم و ستم کا سلسلہ بند کرکے جارحیت کی مذمت کرے.

اہل البیت (ع) نیوز ایجنسی ـ ابنا ـ کی رپورٹ کے مطابق آیت اللہ صافی گلپائگانی نے اپنے کھلے خط میں اسلامی کانفرنس تنظیم کے سربراہ اور تظیم کے رکن ممالک سے اپیل کی ہے کہ یمن کے مظلوم شیعہ باشندوں کا قتل عام روکنے کے لئے سنجیدہ اقدامات کریں.

خط کا متن

بسم اللہ الرحمن الرحیم

معزز سربراہ و ارکان اسلامی کانفرنس تنظیم

قال رسول اللہ صلی اللہ علیہ و آلہ:

«مَن سَمِعَ مُنادیاً یُنادی یا للمسلمین فلم یُجِبہ فلیس بمسلم»

اگر کوئی کسی ندا دینے والے کو مسلمانوں سے مدد مانگتا سنے اور اس کی ندا کا مثبت جواب نہ دے، وہ مسلمان نہیں ہے۔

السلام علیکم و رحمة اللہ

میرے بھائیو آپ کو اسلامی امانتیں، قرآنی امانتیں اور الہی امانتیں سپرد کی گئی ہیں اور دنیا کی سب سے بڑی امانت ـ یعنی مسلمانانان عالم کی حیثیت، شرف اور عزت اور ڈیڑھ ارب مسلمانوں کے خون، مال اور نفوس اور بیشتر یکتاپرستوں کے مال و جان و عزت کی حفاظت ـ آپ کے ذمے ہے وہ یکتاپرست انسان جو توحید کلمہ اور کلمۂ توحید کی بنا پر مصالح و مفادات عامہ اور بنیادی تشخص و وجود کے سلسلے میں  ایک دوسرے کے شریک ہیں اور سامراج کی استکباری ریشہ دوانیوں اور خطرات کے مد مقابل یدِ واحدہ (ایک ہاتھ) کی مانند ہیں اور انہیں امت واحدہ اور ایمانی اخوت  کا اعزاز حاصل ہے.

آج ہم مسلمانان عالم کو ماضی سے کہیں زیادہ وحدت، تعاون، اشتراک عمل اور ایک دوسرے کی پشت پناہی اور صلح و اصلاح فیمابین کی ضرورت ہے اور ایک ملک میں مسلمانوں کی کمزوری تمام مسلمانوں کی کمزوری ہے. اسلامی کانفرنس تنظیم پر فتنوں کی آگ بجھانے اور نا امنیوں کے خاتمے کی بھاری ذمہ داری عائد ہوتی ہے اور اگر وہ اپنی ذمہ داریاں پوری کرنے میں کوتاہی کرے تو یہ اسلام کے ساتھ عظیم خیانت ہوگی.

تنظیم، دنیا میں اسلام کے خلاف بننی والی فضا سے چشم پوشی نہیں کرسکتی اور ضروری و سنجیدہ اقدامات سے دریغ نہیں کرسکتی، عالم اسلام میں اسلام کے نام پر مسلمانوں کے درمیان کمر شکن اختلافات کو نظر انداز نہیں کرسکتی.

پاکستان، افغانستان، عراق اور دیگر علاقوں میں مسلمانوں کے ہاتھوں ہی نہایت ہولناک اور غیر انسانی انداز سے  مسلم کشی کی بنا پر اسلام اور مسلمانی کو دنیا میں سوالیہ نشان بنایا گیا ہے؛ مسلمانوں کا چہرہ قساوت، سنگدلی، بے رحمی اور دہشت گردی کا نشان بنا کر پیش کیا جاتا ہے.

رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ و سلم جو «وَمَا أَرْسَلْنَاكَ إِلَّا رَحْمَةً لِّلْعَالَمِينَ» (1) کے مورد خطاب ہیں اور آپ (ص) نے انسانوں کے لئے اپنا پیغام رحمانیت اور رحیمیت پر استوار فرمایا ہے مگر ان عناصر کی طرف سے مسلمانوں، بے گناہ افراد اور معصوم بچوں کا بے باکانہ قتل عام اس حقیقت کو پردہ ابہام تلے دفن کردیتا ہے.

ہم اسلامی کانفرنس تنظیم سے پوچھتے ہیں کہ اس نے یمن میں برادر کشی کا نظارہ کرتے ہوئے خاموشی کیوں اختیار کی ہے؟ اور وہ اس مسئلے میں مداخلت کیوں نہیں کرتی؟

ظلم و ستم، قتل عام اور اپنے ہی باشندوں کے بنیادی حقوق چھیننے جیسے اقدامات کا ارتکاب کرنے والی حکومت اپنی نہتی ملت کو زمین اور فضا سے نشانہ بنا کر اپنے ہی شہریوں کا قتل عام کیوں کرتی ہے اور ان کی ولایت و امامت پر مبنی مذہب کو ـ جس کی جڑیں قرآن مجید میں استوار ہیں اور یہ مذہب عصر رسالت سے اب تک اس ملک ۔ یمن ۔ میں قائم و دائم ہے ـ کو کیوں برداشت نہیں کرتی؟ اور اسلامی کانفرنس تنظیم ایسی حکومت سے بازخواست کیوں نہیں کرتی؟ اور اگر اسلامی کانفرنس تنظیم اس عظیم اسلامی اور انسانی المئیے  میں اپنے فرائض پر عمل نہیں کرتی تو پھر وہ کہاں اپنی ذمہ داریاں پوری کرتی ہے؟ اور یہ کہ اس تنظیم کی تأسیس کا فلسفہ اور اس کا فائدہ کیا ہے؟

افسوس کا مقام ہے کہ اس المناک جرم میں بعض پڑوسی ممالک بھی یمن کے حکمرانوں کے ساتھ مکمل اور ہمہ پہلو تعاون کررہے ہیں.

میں استکبار و استعمار اور دشمنان اسلام سے وابستہ نام نہاد انسانی حقوق کی تنظیموں کی مجرمانہ خاموشی کی مذمت کرتا ہوں اور اسلامی کانفرنس تنظیم سے اپیل کرتا ہوں کہ وہ اپنے لبوں پر پڑا ہوا خاموشی کا تالا توڑ کر سنجیدگی کے ساتھ اس معاملے میں مداخلت کرے اور شیعیان یمن پر یمنی افواج کے ظلم و ستم و جارحیت بند کروائے اور یمنی حکمرانوں سے احتجاج کرے اور اس کے جرائم کی مذمت کرے.

و لا حول و لا قوة اللہ باللہ العلی العظیم

و السلام علکیم و علی عباد اللہ الصالحین

22 ذی القعدہ 1430

لطف اللہ صافی

-----

1- سورہ انبیاء آیت 107.

 


All Content by AhlulBayt (a.s.) News Agency - ABNA is licensed under a Creative Commons Attribution 4.0 International License