?>

متحدہ عرب امارات کی فلسطین کے خلاف سازشوں کی لمبی تاریخ

متحدہ عرب امارات کی فلسطین کے خلاف سازشوں کی لمبی تاریخ

متحدہ عرب امارات ، گر چہ حال ہی میں صہیونی ریاست سے تعلقات کو معمول پر لانے میں پیش قدم ہوا ہے لیکن فلسطینی مزاحمتی گروہوں پر عرب امارات کی جانب سے دباؤ ڈالے جانے کی ایک طویل تاریخ ہے۔

اہل بیت(ع) نیوز ایجنسی۔ابنا۔ حماس کے کچھ ذرائع نے بتایا کہ فلسطینی مزاحمت کے خلاف متحدہ عرب امارات کی سازش کی ایک لمبی تاریخ ہے اور ابو ظہبی کے حکمران کئی سالوں سے صیہونیوں کی خدمت کر رہے ہیں۔
متحدہ عرب امارات ، گر چہ حال ہی میں صہیونی ریاست سے تعلقات کو معمول پر لانے میں پیش قدم ہوا ہے لیکن فلسطینی مزاحمتی گروہوں پر عرب امارات کی جانب سے دباؤ ڈالے جانے کی ایک طویل تاریخ ہے۔

متحدہ عرب امارات کی "عرب دنیا میں فلسطینی مزاحمت کی حمایت کے ذرائع کو ختم کرنے کے لئے گذشتہ دہائی میں وسیع کوششوں" پر تنقید کرتے ہوئے، کچھ فلسطینی مزاحمتی ذرائع کا کہنا ہے کہ یہ ملک دوسرے عرب ملکوں کے مقابلے میں صہیونی ریاست کے مطالبات پر پورا اتر آیا ہے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ ماضی میں بھی مزاحمتی گروہوں اور فلسطینی قوم کی حمایت کے حوالے سے متحدہ عرب امارات نہ صرف خاموش نہیں رہا بلکہ مزاحمتی گروہوں کے کمانڈروں کو گرفتار کر کے اور ان کی جائداد ضبط کرکے اسرائیل سے اپنی دلی محبت کا ثبوت دیتا رہا ہے۔  

موجودہ وقت میں متحدہ عرب امارات نے فلسطینیوں کے "اثاثوں کو تبدیل کرنے کا عمل روک دیا اور انہیں ضبط کرلیا۔" اس کے بعد اس نے حماس کے درجنوں رہنماؤں اور ان سے وابستہ افواج کو گرفتار کیا۔ ان میں سے متعدد افراد کو [اماراتی] سیکیورٹی خدمات نے ان کی کمپنیوں کو تشدد کا نشانہ بنایا جو حماس اور دیگر مزاحمتی گروہوں کو امداد فراہم کرتی تھی۔  

ذرائع نے بتایا کہ متحدہ عرب امارات میں مرنے والے افراد میں سے ایک حماس کے پولیٹیکل بیورو کے ممبر موسی ابو مرزوق کا رشتہ دار تھا۔ اس شخص کو عرب ممالک کی ثالثی کے بعد جیل سے رہا کیا گیا تھا۔ فلسطینی کاروباری شخصیات عبد العزیز الخالدی ایک اور شخص ہے جسے 45 دن تک حراست میں لیا گیا اور اسے شدید تشدد کا نشانہ بنایا گیا۔

ذرائع کے مطابق ، ابوظہبی عہدے داروں نے حماس سے وابستہ فلسطینی شخصیات کی ملکیت میں چار کمپنیوں کو بھی بند کردیا ، ان کی ملکیت ضبط کرلی اور ان کے مالکان کو اس بہانے سے برطرف کردیا کہ انہوں نے حماس کی حمایت کی ہے یا ان کے رشتہ دار اس تحریک کے ممبر ہیں۔

حماس کے ایک ذریعے نے یہ بھی بتایا کہ اس وقت، سعودی عہدیداروں کو یہ بھی بتایا گیا تھا کہ حماس کے قریبی رہنما اور فوجیں ملک کے اندر ہیں۔ اس کے نتیجے میں ریاض میں ان کے درجنوں افواج کو گرفتار کیا گیا۔ ذرائع نے وکی لیکس کی دستاویزات کی تصدیق کی ہے کہ سعودی عرب میں حماس فورسز کی نظربندی اور تشدد کے تحت اعتراف جرم کرنے کی ان کی مجبوری ہے۔

فلسطینی سکیورٹی ذرائع نے یہ بھی زور دیا کہ متحدہ عرب امارات نے حالیہ برسوں میں غزہ کی پٹی میں مزاحمتی گروپوں کی جاسوسی کے لئے کچھ فلسطینیوں کی خدمات حاصل کی تھیں۔ ان میں سے ایک نے یہ بھی اعتراف کیا کہ متحدہ عرب امارات کی انٹلیجنس سروس نے ان سے میزائلوں، راکٹ لانچروں اور قید صہیونی فوجیوں کے ساتھ ساتھ اس تحریک کے مالی تعاون کے ذرائع کے بارے میں معلومات فراہم کرنے کو کہا ہے۔

الاخبار کے مطابق ، غزہ میں سنہ 2014 کی جنگ کے دوران ، حماس کی سکیورٹی فورسز کو پتہ چلا تھا کہ متحدہ عرب امارات ایک "خطرناک جاسوسی کا منصوبہ" بنا رہا ہے۔ جاسوسی متحدہ عرب امارات کے ریڈ کریسنٹ فیلڈ اسپتال کے زیراہتمام ہوئی۔ یہ ہسپتال انسان دوست امداد فراہم کرنے کے بہانے بنایا گیا تھا۔

حماس کی سکیورٹی فورسز نے دریافت کیا ہے کہ اماراتی کارکن تمام ملک کی انٹیلیجنس سروس کے افسر ہیں ، اور غزہ میں ان کا خفیہ مشن القسام بریگیڈ اور راکٹ لانچروں کے عہدوں سے متعلق معلومات اکٹھا کرنا ہے۔

حماس فورسز نے اماراتی افسران کے اصل نام دریافت کرنے کے بعد ان سے تفتیش بھی کی۔ اس کے بعد عرب ممالک نے ثالثی کی ، اور حماس نے انہیں رفح عبور کے راستے غزہ سے باہر جانے کی اجازت دی اور اپنا سارا سامان ضبط کرلیا۔

متحدہ عرب امارات اور صہیونی ریاست نے گزشتہ ہفتے کو امریکہ کے ساتھ ایک مشترکہ بیان میں اعلان کیا تھا کہ انہوں نے امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے توسط سے تعلقات معمول پر لانے کا فیصلہ کیا ہے، اور یہ معاہدہ جلد ہی اسرائیلی وزیر اعظم بینجمن نیتن یاھو کے ذریعہ امارتی ولیعہد کی موجودگی میں وائٹ ہاؤس میں ہوگا۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۲۴۲


اپنی رائے بھیجیں

آپ کا ای میل شائع نہیں ہو گا۔ * والی خالی جگہوں کو مکمل کیجیے

*

مغربی ممالک میں پیغمبر اکرم (ص) کی توہین کی مذمّت
ویژه‌نامه ارتحال آیت‌الله تسخیری
پیام رهبر انقلاب به مسلمانان جهان به مناسبت حج 1441 / 2020
حضـرت ابــوطالب (ع) حامی پیغمبر اعظـم (ص) بین الاقوامی کانفرنس
ہم سب زکزاکی ہیں / نائیجیریا کے‌مظلوم‌شیعوں کے‌ساتھ اظہار ہمدردی