?>

دھشتگردی اور دیگر جرائم سے نمٹنے کے لیے ایران اور تاجیکستان کا باہمی تعاون پر زور

دھشتگردی اور دیگر جرائم سے نمٹنے کے لیے ایران اور تاجیکستان کا باہمی تعاون پر زور

فضلی نے کہا کہ مشرق وسطی میں، انتہا پسندی، دہشت گردی، انسانی اسمگلنگ، منشیات کی اسمگلنگ اور عدم تحفظ بنیادی طور پر خطے سے باہر کے ممالک ہی کرتے ہیں۔

اہل بیت(ع) نیوز ایجنسی۔ابنا۔ ایران اور تاجیکستان کے وزرائے داخلہ نے ایک ملاقات میں دہشتگردی سے نمٹنے، منظم یافتہ جرائم، منشیات کی اسمگلنگ اور سائبر جرایم کیخلاف مقابلہ کرنے میں باہمی تعاون پر زور دیا۔

تفصیلات کے مطابق، تاجیکستان کے دورے پر آئے ہوئے "عبدالرضا رحمانی فضلی" نے آج بروز منگل کو اپنے تاجک ہم منصب سے ملاقات اور گفتگو کی۔

فضلی نے کہا کہ مشرق وسطی میں، انتہا پسندی، دہشت گردی، انسانی اسمگلنگ، منشیات کی اسمگلنگ اور عدم تحفظ بنیادی طور پر خطے سے باہر کے ممالک ہی کرتے ہیں۔

انہوں نے 42 سالوں کے دوران، دباؤ اور بیرونی حملوں کیخلاف ایرانی مزاحمت کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ یہ سارے مسائل، ایرانی آزادی اور مزاحمت اور ملک میں بغیر اغیار کے انحصار کے قیام امن کی فراہمی پر دشمنوں اور غیر خطی ممالک کے غصے کی وجہ سے ہیں۔

فضلی نے ثقافتی، تاریخی اور دیگر شعبوں میں دونوں ملکوں کے درمیان مشترکات پر تبصرہ کرتے ہوئے تاجیکستان سے تعلقات کے فروغ میں دلچسبی کا اظہار کرلیا۔

ایرانی وزیر داخلہ نے کہا کہ ایران اور تاجیکستان خطے میں قیام امن اور سلامتی کے خواہاں ہیں اور ہم اس حوالے سے تعاون پر تیار ہیں۔

انہوں نے کہا کہ علاقائی ممالک خود ہی خطے کے مسائل کو حل کرسکتے ہیں؛ ایران اور تاجیسکتان کے تعلقات میں اتاؤ چڑھاؤ کے باوجود دونوں ملکوں کے درمیان اچھے اور تعمیری تعلقات قائم ہیں لہذا ہمیں اقتصادی اور تجارتی شعبوں میں سرمایہ کاری، مشترکہ کمپنیوں کے قیام اور تعلقات کے فروع میں مزید کوششیں کرنی ہوں گی۔

انہوں نے سیاسی، اقتصادی، معاشرتی، سیکورٹی، بحران مینجمنٹ و غیرہ میں تاجیکستان سے تعاون پر تیاری کا اظہار کرلیا۔

اس موقع پر تاجیکستان کے وزیر داخلہ نے علاقائی تبدیلیوں اور خطے میں دہشتگرد اور انتہاپسند گروہوں کی موجودگی میں اضافے پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ دہشتگردی، منظم یافتہ جرائم، منشیات کی اسمگلنگ اور سائبر جرائم کی روک تھام بغیر خطی ممالک کے تعاون سے ممکن نہیں ہے اور ہم اس حوالے سے ایران سے تعاون پر تیار ہیں۔

اس کے علاوہ اس ملاقات میں سیکورٹی شعبوں میں دونوں ملکوں کے درمیان طے پانے والے معاہدوں کے نفاذ کی ضرورت، دہشتگردی، منشیات کی اسمگلنگ، انتہا پسندی، منشیات کی پیداوار، مجرموں کی معلومات کے تبادلہ، آرٹس اور ثقافتی ورثے کی مصنوعات، اسلحے، دھماکہ خیز مواد کی اسمگلنگ کیخلاف مقابلے کیلئے تعاون پر زور دیا گیا۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۲۴۲


اپنی رائے بھیجیں

آپ کا ای میل شائع نہیں ہو گا۔ * والی خالی جگہوں کو مکمل کیجیے

*

مغربی ممالک میں پیغمبر اکرم (ص) کی توہین کی مذمّت
ویژه‌نامه ارتحال آیت‌الله تسخیری
پیام رهبر انقلاب به مسلمانان جهان به مناسبت حج 1441 / 2020
حضـرت ابــوطالب (ع) حامی پیغمبر اعظـم (ص) بین الاقوامی کانفرنس
ہم سب زکزاکی ہیں / نائیجیریا کے‌مظلوم‌شیعوں کے‌ساتھ اظہار ہمدردی