المصطفیٰ یونیورسٹی کا شمار دنیا کی بہترین اور بین الاقوامی تعلیمی درس گاہوں میں ہوتا ہے: ساجد نقوی

المصطفیٰ یونیورسٹی کا شمار دنیا کی بہترین اور بین الاقوامی تعلیمی درس گاہوں میں ہوتا ہے: ساجد نقوی

المصطفیٰ انٹرنیشنل یونیورسٹی کا شمار دنیا کی بہترین اور بین الاقوامی درس گاہوں کے ساتھ تحقیقی اداروں میں ہوتاہے، بین الاقوامی سطح پر تسلیم شدہ تعلیمی ادارے پر پابندیاں نہ صرف ناجائز، غیر اخلاقی بلکہ بدترین تعلیم و انسانیت دشمنی اور استعماریت کی بدترین مثال، ناقابل قبول اور انتہائی قابل مذمت ہے۔

اہل بیت(ع) نیوز ایجنسی۔ابنا۔ قائد ملت جعفریہ پاکستان علامہ سید ساجد علی نقوی کہتے ہیں تعلیمی ادارے کسی بھی معاشرے کی اصلاح ، ذہن سازی اور ترقی میں اہم ترین کردار ادا کرتے ہیں،المصطفیٰ انٹرنیشنل یونیورسٹی کا شمار دنیا کی بہترین اور بین الاقوامی درس گاہوں کے ساتھ تحقیقی اداروں میں ہوتاہے، بین الاقوامی سطح پر تسلیم شدہ تعلیمی ادارے پر پابندیاں نہ صرف ناجائز، غیر اخلاقی بلکہ بدترین تعلیم و انسانیت دشمنی اور استعماریت کی بدترین مثال، ناقابل قبول اور انتہائی قابل مذمت ہے۔
ان خیالات کا اظہار انہوں نے امریکہ کی جانب سے المصطفیٰ انٹرنیشنل یونیورسٹی پر لگائی جانیوالی پابندی کی شدید ترین الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے کیا۔ قائد ملت جعفریہ پاکستان علامہ سید ساجد علی نقوی نے کہاکہ کسی بھی معاشرے کی اصلاح ، ذہن سازی اور ترقی میں تعلیمی ادارے انتہائی اہمیت کے حامل ہوتے ہیں جبکہ بین الاقوامی سطح پرتعلیمی میدان میں خدمات انجام دینے والے ادارے دراصل انسانیت کی فلاح کےلئے اہم ترین کردار ادا کرتے ہیں جس سے نہ صرف معاشرے ، افراد ، مختلف مذاہب و ادیان قریب آتے ہیں بلکہ ان کے علمی اور تحقیقی تجربات سے مستفید بھی ہوتے ہیں۔ المصطفیٰ انٹرنیشنل یونیورسٹی کا شمار بھی دنیا کی ان بہترین اور بین الاقوامی درس گاہوں میں ہوتاہے جنہیں نہ صرف بین الاقوامی سطح پر تسلیم کیا جاتاہے بلکہ باکردار، عالم اور محقق اس تربیت سازی کا عکاس ہیں جنہوںنے عالمی سطح پر جہاں تحقیقات میں روئے زمین پر رہنے والے انسانوں کی خدمت کی ہے وہیں یہاں سے فارغ التحصیل علماء اتحاد امت اور دین اسلام کی تبلیغ کےلئے خدمات انجام دے رہے ہیں۔
انہوں نے بین الاقوامی اداروں کے حوالہ جات دیتے ہوئے کہاکہ المصطفیٰ یونیورسٹی جن بین الاقوامی تنظیمات کے ساتھ مربوط اور کام کررہی ہے ان میں اور آئی سی کی رہنمائی میں چلنے والے ادارے فیڈریشن آف دی یونیورسٹیز آف دی اسلام ورلڈ (ایف یو آئی ڈبلیو)، یونیسکو کی شراکت سے چلنے والے ادارے انٹرنیشنل ایسوسی ایشن آف یونیورسٹیز (آئی اے یو)، انگلستان کے شہر آکسفورڈ میں قائم اعلیٰ تعلیمی ادارے انٹرنیشنل ایسوسی ایشن آف یونیورسٹی پریذیڈنٹ (آئی اے یو پی)، یونیسکو کے ساتھ مربوط ایشیا اور بحرالکاہل ریجن کے تعلیمی ادارے ایسوسی ایشن آف یونیورسٹیز آف ایشیا اینڈ دی پیسفک(اے یو اے پی)، ناروے کے شہر اوسلو میں قائم بین الاقوامی ادارے انٹرنیشنل کونسل فار اوپن اینڈ ڈسٹینس ایجوکیشن (آئی سی ڈی اے)اور یونین آف اسلامک ورلڈ سٹوڈٹنس (مجمع اتحاد انشجویان جہان اسلام) شامل ہیںجن کے ساتھ دنیا کے کروڑوں طلباءو طالبات کے ساتھ لاکھوں کی تعداد میں اساتذہ، پروفیسرز، پی ایچ ڈی سکالرز اور علماءمربوط ہیں ۔اس پائے کی یونیورسٹی پر امریکہ کی جانب سے پابندی کھلی زیادتی، ناجائز، غیر اخلاقی ہونے کے ساتھ ساتھ بدترین تعلیم و انسانیت اور استعماریت کو دوام بخشنے کےلئے تعلیمی ادارے پر مجرمانہ حملے کے مترادف ہے ۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۲۴۲


اپنی رائے بھیجیں

آپ کا ای میل شائع نہیں ہو گا۔ * والی خالی جگہوں کو مکمل کیجیے

*

All Content by AhlulBayt (a.s.) News Agency - ABNA is licensed under a Creative Commons Attribution 4.0 International License