مسجدالحرام کے ارد گرد عجیب عمارتیں + تصاویر

مسلمانوں کا حال یہ ہے کہ ان کے مقدس ترین مقام کی ری ڈیزائننگ کا کام دو عجیب افراد یعنی برطانوی فری میشن نورمن فوسٹر اور زاحا حدید کو سونپا گیا ہے اور ابراج البیت میں سے ایک برج پر نام بھی شیطانی شخصیت یعنی فوسٹر کے نام پر رکھا گیا ہے۔

شیطانی سوچ مرکز ہمیشہ سے دین کو انسانی زندگی سے نکال باہر کرنے کے درپے تھا اور ہے تا ہم ان کا ایک عجیب اقدام بھی دیکھئے۔فری میشنز 72 کے ہندسے کو احترام کی نگاہ سے دیکھتے ہیں۔ کہتے ہیں کہ نبی سلیمان علیہ السلام نے 72 بد عمل جنوں کو گرفتار کیا جن سے وہ مختلف قسم کے کام لیتے تھے اور اس طرح برے جنوں یا شیاطین کو انھوں نے سخت نقصان پہنچایا۔ کہتے ہیں کہ ان جنوں سے حضرت سلیمان (ع) نے ایک عمارت تعمیر کرائی جس کو ماسون کہا گیا اور اسی مناسبت سے وہ آپ آپ کو فری ماسون کہتے ہیں اور انگریزی میں اس کو فری میشن کہا جاتا ہے۔ فری ماسون کے معنی "آزاد عمارتوں" کے ہیں۔ وہ اپنے آپ کو آزاد کہتے ہیں کیونکہ جن 72 جنوں سے حضرت سلیمان (ع) نے عمارت تعمیر کروائی تھی وہ ان کے گناہوں کی سزا کے طور پر تھی اور وہ قیدی تھے۔ فری میشن 72 کے ہندسے کو طاقت کی علامت سمجھتے ہیں کیونکہ حضرت سلیمان (ع) کے ہاتھوں گرفتار ہونے والے جن 72 تھے اور شیطان پرست بھی فری مشینز کے ایک شعبے کے طور پر اس کو اپنی طاقت کی علامت سمجھتے ہیں۔ اور ہاں آل سعود نے ان علامتوں کو ہٹا کر دیوار میں تبدیل کیا ہے جن کو مسلمان شیطان کی علامتیں سمجھ کر کنکریاں مارتے تھے لیکن وہی علامتیں آج آپ کو کعبہ کے ارد گرد نظر آئیں گی اور ان کی اونچائی اتنی ہے کہ دور سے مکہ میں داخل ہوتے ہوئے حجاج کرام کو وہی علامتیں نظر آتی ہیں جو پہلی نظر میں صرف اونچی عمارتوں کی شکل میں نظر آتی ہیں۔آپ درج ذیل تصاویر میں دیکھتے ہیں کہ کتنی اونچی عمارتوں نے مسجدالحرام اور خانۂ کعبہ کو گھیر رکھا ہے اور کتنی عمارتیں ابھی زیر تعمیر ہیں جن پر کامی جاری ہے۔ اس کام کو مسجدالحرام کے توسیعی منصوبے کا نام بھی دیا جاتا ہے۔ ان عمارتوں میں اہم ترین عمارت 72 منزلہ ہے اور یہ عمارت فری میشنز کی طاقت کی علامت ہے جو مسلمانوں کے مقدس ترین مقام تک پہنچ چکے ہیں اور وہاں اپنی مرضی کے تعمیری منصوبوں پر کام کررہے ہیں۔ اور ہاں! اس بلند و بالا عمارت کے ماتھے پر اللہ کا نام بھی نظر آتا ہے جو راقم جیسے سادہ مسلمانوں کو دھوکا دینے کے لئے نصب کیا گیا ہے۔ بعض لوگوں کا خیال ہے کہ یہ عمارت خانہ کعبہ کی عظمت کو چھپانے کے لئے بنائی گئی ہے اور اس کا سایہ خانہ کعبہ پر پڑتا ہے۔ چھ سو میٹر کی اس بلند و بالا عمارت کے اوپر ایک گھڑیال نصب کیا گیا ہے جس کی اونچائی 43 میٹر اور چوڑائی 33 میٹر ہے جو نوعیت کے لحاظ سے اپنی مثال آپ ہے۔ یہ عمارت چھ دوسری عمارتوں کے ساتھ کھڑی کی گئی ہے اور ساری عمارتیں خانہ کعبہ کے اوپر واقع ہوئی ہیں۔ کچھ لوگوں نے اسی بنا پر ان عمارتوں کی تعمیر پر احتجاج بھی کیا اور اس اقدام کو شریعت کی خلاف ورزی بھی قرار دیا لیکن سعودی حکمرانوں کے بزعم یہ ان کی عظمت و قوت کی علامت ہیں۔کعبہ کا محاصرہ کرنے والی ان عمارتوں کی تعمیر 5 سال قبل شروع ہوئی تھی اور سنہ 2012 میں "ابراج البیت" کہلانے والی ان عمارتوں کی تعمیر کا کام مکمل ہونے والا ہے یا مکمل ہوچکا ہے جبکہ شیطانی فرقوں کا خیال ہے۔

1

ان نام نہاد ابراج البیت (یعنی بیت اللہ کی عمارتوں) کے تعمیری منصوبے کی تمکیل پر کعبہ شیطانی علامتوں کے سائے میں قرار پائے گا۔ بلند و بالا عمارت جو دو بازؤوں یا پروں کے درمیان تعمیر ہوئی ہے فرعونوں کے زمانے سے تعمیر ہونے والا دنیا اور تاریخ کا عظیم ترین ابلیسی ستون (اوبیلسیک Obelisk یا چوکھٹا مینار) ہے۔ابراج البیت جو درحقیقت تجارتی عمارتیں ہیں اور جن کو شیطان کے سینگوں کا نما دیا جائے تو مناسب تر ہوگا کعبہ کی الہی اور تاریخی عمارت کو گھیر چکی ہیں۔ ان میں سے ایک عمارت کو "نورمن فوسٹر Norman Foster بلڈنگ کے نام سے مشہور ہے جو نام نہاد بیت اللہ توسیعی منصوبے کا خالق سمجھا جاتا ہے اور مشہور ترین فری میشن اور انجنئیر ہے اور دوسری عمارت کا نام "بن لادن ٹریدنگ کمپلیکس" ہے۔ 

2

مسلمانوں کا حال یہ ہے کہ ان کے مقدس ترین مقام کی ری ڈیزائننگ کا کام دو عجیب افراد یعنی برطانوی فری میشن نورمن فوسٹر اور زاحا حدید کو سونپا گیا ہے اور ابراج البیت میں سے ایک برج پر نام بھی شیطانی شخصیت یعنی فوسٹر کے نام پر رکھا گیا ہے۔ مکہ معظمہ کے سلسلے میں مزید معلومات کے لئے آنے والے دنوں میں مزید مرقومات قارئین و صارفین کی خدمت میں پیش کی جائیں گی۔ .........../110


دنیا بھر میں میلاد پیغمبر رحمت(ص) کی محفلوں کی خبریں
سینچری ڈیل، نہیں
حضـرت ابــوطالب (ع) حامی پیغمبر اعظـم (ص) بین الاقوامی کانفرنس میں
ہم سب زکزاکی ہیں / نائیجیریا کے‌مظلوم‌شیعوں کے‌ساتھ اظہار ہمدردی