شیعہ مخالف اقدامات جاری؛

سعودی عرب میں حوزہ علمیہ علامہ المہاجری کو بند کردیا گیا

سعودی حکمرانوں نے اہل تشیع کے خلاف اپنا امتیازی سلوک کا سلسلہ جاری رکھتے ہوئے مرحوم علامہ شیخ محمد المہاجری کے حوزہ علمیہ کو بند کردیا۔

اہل البیت (ع) نیوز ایجنسی ـ ابنا ـ کی رپورٹ کے مطابق حوزہ علمیہ شیخ محمد المہاجری الاحساء صوبے کے شہر الہفوف میں واقع ہے اور الاحساء کے علاقائی حکمرانوں کے براہ راست احکامات کے نتیجے میں بند کردیا گیا ہے۔ مدرسہ بند ہونے کے بعد شیعہ علماء نے احساء اور دمام کے سرکاری عہدیداروں کے ساتھ مذاکرات کئے اور طے پایا کہ یہ حوزہ علمیہ دوبارہ کھول دیا جائے لیکن ان ہی اہلکاروں نے اچانک اپنا ارادہ بدل دیا اور اس حوزہ کی مکمل بندش کے احکامات جاری کردیئے۔یاد رہے کہ گذشتہ ایک سال کے دوران سعودی حکام نے اہل تشیع کی 9 مساجد کو بھی بند کردیا ہے اور اب جبکہ شیعہ علماء نے سنی علماء کے ساتھ مل کر پر امن بقائے باہمی کی دستاویز پر دستخط بھی کردیئے ہیں حکومت اپنے رویئے سے دستبردار ہونے کے لئے تیار نظر نہیں آتی۔ .................../110


اسلام کے سپہ سالار الحاج قاسم سلیمانی اور ابومہدی المہندس کی مظلومانہ شہادت
سینچری ڈیل، نہیں
حضـرت ابــوطالب (ع) حامی پیغمبر اعظـم (ص) بین الاقوامی کانفرنس میں
ہم سب زکزاکی ہیں / نائیجیریا کے‌مظلوم‌شیعوں کے‌ساتھ اظہار ہمدردی