داعش اور صہیونیت ایک ہی قینچی کے دو حصے ہیں

داعش اور صہیونیت ایک ہی قینچی کے دو حصے ہیں

مجمع جہانی تقریب مذاھب اسلامی کے جنرل سیکرٹری نے تکفیریت اور صہیونیت کو عالم اسلام کے لئے اساسی مشکل قرار دیا ہے۔

اہل بیت(ع)نیوز ایجنسی۔ابنا۔ تقریب خبر رساں ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق فلسطین کی مقاومت میں علمائے مقاومت کے کردار کے عنوان سے معقد کی جانے والی کانفرنس کی خبری نشست سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ مجمع جہانی تقریب مذاہب اسلامی کی کوششوں سے یہ کانفرنس 9 اور 10 ستمبر کو اسلامی جمہوریہ ایران کے دارالحکومت تہران میں منعقد کی جائے گی۔ جس میں دنیا کے ۵۳ ممالک سے تقریبا 200 علمائے کرام شرکت کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ 143 علما اور 75 دانشور حضرات بھی اس کانفرنس میں مدعو کئے گئے ہیں تاکہ اس کانفرنس کے اہداف کے حصول کو یقینی بنایا جا سکے۔ آیت اللہ ارآکی نے کہا کہ اس کانفرنس کا اصل مقصد فلسطینی مقاومت کی حمایت کرنا ہے۔ ہم سب نے پچھلے دو تین مہینوں میں اس بات کا مشاہدہ کیا ہے کہ کس طرح غاصب صہیونی حکومت نے اپنے وحشیانہ حملوں کے زریعے غزہ میں 2 ہزار سے زیادہ نہتے مسلمانوں کو شہید کر دیا جس میں 500 سے زیادہ معصوم بچے اور خواتین اور بوڑھوں کی ایک بڑی تعداد بھی شامل ہے۔ انہوں نے کہا کہ غاصب صہیونی حکومت نے غزہ میں ہزاروں گھر تباہ کر دیئے اور 11 ہزار سے زائد افراد کو زخمی بھی کیا ہے۔
انہوں نے عالم اسلام کی جانب سے غزہ میں مزاحمت کی حمایت پر زور دیتے ہوئے کہا کہ یہ اس وقت کی اہم ضرورت ہے کہ عالم اسلام کے علماء اور بزرگان ایک جگہ جمع ہوں اور فلسطین اور غزہ سے متعلق اپنے نظریات اور غزہ کے فلسطینی مجاہدوں کی بھرپور حمایت کا اعلان کریں اور اس سسسلے میں دنیا بھر کے مسلمانوں کو فلسطین کی اسلامی مزاحمت سے آشنا کریں۔ آیت اللہ اراکی نے کہا کہ آج دنیا پر یہ بات روز روشن کی طرح عیاں ہے کہ غاصب صہیونی حکومت تمام انسانیت کے لئے ایک بہت بڑا خطرہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ دنیا بالخصوص عالم اسلام کو چاہئے کہ وہ مزاحمت کی حمایت کے لئے اقدامات کریں اور ایک دوسرے کے ہاتھوں میں ہاتھ دے کر مزاحمت کو ایک نئے مرحلے میں داخل کریں۔ عالم السام کو چاہئے کہ وہ غزہ میں جاری فلسطینی اور اسلامی مزاحمت کی حمایت سے قدم پیچھے نہ ہٹائے اور انہیں غزہ پٹی میں محصور ہونے سے روکے۔
آیت اللہ اراکی نے خطے میں داعش نامی تکفیری گروہ کے وجود میں آنے کو صہیونی سازش قرار دیتے ہوئے کہا کہ داعش کے نام سے جو تکفیری گروہ اس وقت ہمسایہ ممالک میں نظر آ رہا ہے یہ در اصل صہیونی پالیسیوں کا حصہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ داعش اور صہیونیت ایک ہی قینچی کے دو حصے ہیں۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۲۴۲


اپنی رائے بھیجیں

آپ کا ای میل شائع نہیں ہو گا۔ * والی خالی جگہوں کو مکمل کیجیے

*

Quds cartoon 2018
پیام امام خامنه ای به مسلمانان جهان به مناسبت حج 2016
We are All Zakzaky
telegram