جناب اختری: ہم نے پیغمبر اسلام (ص) کو پہچنوانے میں کوتاہی سے کام لیا

جناب اختری: ہم نے پیغمبر اسلام (ص) کو پہچنوانے میں کوتاہی سے کام لیا

جناب اختری نے کہا: اس فیسٹیول کے انعقاد کا مقصد ان شبہات اور توہین آمیز گستاخیوں کا جواب دینا ہے جو دین مبین اسلام اور خاص طور پر پیغمبر اکرم (ص) کی شان میں ان آخری سالوں میں کی گئی۔

اہل بیت(ع) نیوز ایجنسی۔ابنا۔ پیغمبر اعظم (ص) فیسٹیول کی بین الاقوامی کانفرنس کی افتتاحی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے اہل بیت(ع) عالمی اسمبلی کے سکریٹری جنرل جناب حجۃ الاسلام و المسلمین (ع) اختری صاحب نے کہا: ہمیں بہت خوشی کا احساس ہو رہا ہے کہ ہم اس خوبصورت کانفرنس کو عید مبعث کے آستانے میں منعقد کر رہے ہیں۔
انہوں نے کہا: اس فیسٹیول کے انعقاد کا مقصد ان شبہات اور توہین آمیز گستاخیوں کا جواب دینا ہے جو دین مبین اسلام اور خاص طور پر پیغمبر اکرم (ص) کی شان میں ان آخری سالوں میں کی گئی۔
حجۃ الاسلام اختری نے کہا: سلمان رشدی کی شیطانی کتاب کے مظہر عام پر آنے کے بعد سے غیر مسلم دنیا میں اسلام اور پیغمبر اسلام (ص) کے خلاف توہین آمیز فضا قائم ہو گئی البتہ گزشتہ ادوار میں بھی الہی نمائندوں اور انبیاء کو جھٹلایا جاتا رہا ہے اور ان کے خلاف پروپیگنڈے کئے جاتے ہیں۔
انہوں نے کہا: ہر زمانے میں اللہ کے نبیوں کو دشمنوں کی سازشوں کا سامنا رہا ہے ہمارے پیغمبر (ص) بھی اس چیز سے مستثنیٰ نہیں تھے۔
اہل بیت(ع) عالمی اسمبلی کے سیکریٹری جنرل نے کہا: ہمارے دور میں سلمان رشدی نے اسلام کے خلاف پروپیگنڈا کیا لیکن امام راحل (رہ) نے اپنے عمیق ادراک کی وجہ سے اس کے ارتداد کا حکم صادر کر کے اس جیسے دیگر توہین آمیز اقدامات کی روک تھام کرنے کی کوشش کی۔
انہوں نے مزید کہا: دشمنوں نے اسلام مخالف فلمیں بنا کر، کارٹون بنا کر، قرآن مجید کے نسخے جلا کر ۔۔۔ اپنی سازشوں کو جاری رکھا لیکن دشمن کی سازشوں کے مقابلے میں ہم نے کوئی ٹھوس کام انجام نہیں دیا۔
جناب اختری صاحب نے کہا: اس میں کوئی شک نہیں ہے کہ دشمن کی ان حرکتوں سے اسلام میں ترقی ہوئی اور ان ممالک میں اسلام پھیلا جن میں پھیلنے کا تصور بھی نہیں تھا۔ لیکن مسلمانوں کو ان سازشوں کے مد مقابل ٹھوس اقدامات کرنے کی ضرورت تھی جو نہیں ہو سکے۔
اہل بیت(ع) عالمی اسمبلی کے سکریٹری جنرل نے کہا: اسمبلی کا اس عنوان سے زیادہ فریضہ بنتا ہے کہ اسمبلی ان سازشوں کا علمی اور منطقی طریقے جواب دے چونکہ اہل بیت(ع) عالمی اسمبلی ایسا عالمی ادارہ ہے جو تمام مسلمانوں اور اہل بیت(ع) کے پیروکاروں کے ساتھ رابطہ رکھتا ہے لہذا وہ قرآنی تعلیمات اور اسلامی معارف کی نشر و اشاعت کے ساتھ ان سازشوں کا منطقی جواب دے۔
انہوں نے پیغمبر اعظم(ص) فیسٹیول کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا؛ یہ فیسٹیول اسی مقصد کے پیش نظر منعقد کیا گیا ہے کہ اس میں انگریزی زبان سے تعلق رکھنے والے اہل قلم، قلم اٹھائیں اور دشمنوں کو انہیں کی زبان میں جواب دیں۔
انہوں نے کہا: سب سے بہترین زبان جس کے ذریعے عصر حاضر میں پیغمبر اسلام کو دنیا میں پہچنوایا جا سکتا ہے اور دشمنوں کا ان کے پروپیگنڈوں کا جواب دیا جا سکتا ہے فن اور سینما کی زبان ہے۔
انہوں نے کہا: ہمارے لیے اس پہلے مرحلے میں یہ حیرت انگیز بات تھی کہ ۸۰۰ سے زیادہ تخلیقی آثار کے ذریعے اس فیسٹیول کا استقبال ہوا۔
انہوں نے کہا: ہم اس فیسٹیول کے اختتام پر ان افراد کی زحمتوں کی قدر دانی کرتے ہوئے انہیں نفیس جواز سے نوازیں گے جنہوں نے اپنی تخلیقات سے اس فیسٹیول میں حصہ لیا۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۲۴۲


متعلقہ مضامین

اپنی رائے بھیجیں

آپ کا ای میل شائع نہیں ہو گا۔ * والی خالی جگہوں کو مکمل کیجیے

*

پیام امام خامنه ای به مسلمانان جهان به مناسبت حج 2016
We are All Zakzaky
telegram