امیر المومنین کے یوم ولادت پر اصغریہ علم و عمل تحریک کے مرکزی صدر کا تہنیتی پیغام

امیر المومنین کے یوم ولادت پر اصغریہ علم و عمل تحریک کے مرکزی صدر کا تہنیتی پیغام

سید پسند علی رضوی نے مزید کہا کہ عدالت ایک ایسا مقولہ ہے جو اس دور میں زیادہ تر حضرت علی السلام کی سیرت اور خلافت سے مربوط سمجھا جاتا ہے اس کی وجہ بھی واضع ہے کہ حضرت علی علیہ السلام نے عدالت کے قیام کی خاطر اپنا سب کچھ قربان کردیا ۔

اہل بیت(ع) نیوز ایجنسی۔ابنا۔ اصغریہ علم و عمل تحریک پاکستان کے مرکزی صدر سید پسند علی رضوی نے امیرالمومنین حضرت امام علی علیہ السلام کے یوم ولادت پہ اپنے پیغام میں کہا ہے کہ حضرت امیرالمومنین علی علیہ السلام نے اسلام، دین ، پیغمبر اسلام کی زندگی، دین پیغمبر کی پاسداری، امت اسلامیہ کی عظمت و وقار کے لئے ایثار و قربانی کا جو نمونہ پیش کیا وہ واقعی انسانی قوت و استعداد سے بالاتر ہے، پچپن سے ہی آپ نے پیغمبر اسلام کو اپنے استاد اور تربیت کنندہ کی حیثیت سے دیکھا، آپ نے پیغمبر اسلام کے سائے میں نشونما کے مراحل طے کئے، مکے کے ان انتہائی دشوار تیرہ برسوں میں، اس کے بعد مدینے کی جانب ہجرت کے انتہائی سخت مرحلے میں اور پھر مدینے میں پیغمبر اکرم کی دس سالہ حیات طیبہ کے دوران، ان جنگوں میں اور ایثار و قربانی کے ان مراحل میں، ہر جگہ یہ انسان ایثار و قربانی کے بام ثریا پہ کھڑا نظر آتا ہے۔  پیغمبر اسلام کی رحلت کے بعد بھی یہی سلسلہ رہا، امیر المومنین علی علیہ السام کا صبر و ضبط کرنا بھی ایثار تھا، خلافت کی محدود مدت میں آپ نے جو کچھ کیا سب ایثار کا نمونہ ہے، حضرت امیر المومنین علیہ السلام کے ایثار اور قربانیوں کی کتاب ہر دیکھنے والے کے لئے ایک طویل اور ضخیم کتاب ہے، جو انسان کو حیرت زدہ کر دیتی ہے، ایک انسان عزم راسخ کے ساتھ راہ خدا میں اپنی جان، اپنا مقام و مرتبہ، اپنی توانائیاں، اپنے جملہ امور سب کچھ قربان کردیتا ہے۔ ہمارے اور ہم جیسے افراد کے تصور سے بھی یہ چیزیں بہت بالاتر ہیں، یہ بھی حضرت امیر المومنین علیہ السلام کی زندگی کا ایک عظیم باب ہے جو تحریر کیا جائے تو ضخیم کتاب ہوجائیگی۔

سید پسند علی رضوی نے مزید کہا کہ عدالت ایک ایسا مقولہ ہے جو اس دور میں زیادہ تر حضرت علی السلام کی سیرت اور خلافت سے مربوط سمجھا جاتا ہے اس کی وجہ بھی واضع ہے کہ حضرت علی علیہ السلام نے عدالت کے قیام کی خاطر اپنا سب کچھ قربان کردیا اور اس راستے میں اتنی مشکلات اٹھائیں کہ جو عام انسان کے بس کی بات نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ  ہمیں چاہئے کہ عادل  وقت امام زمانہ ؑ  کے سچے سپاہی  ولی امر مسلمین  سید علی خامنائی کے ہاتھ مظبوط کرنے چاہئں۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۲۴۲


اپنی رائے بھیجیں

آپ کا ای میل شائع نہیں ہو گا۔ * والی خالی جگہوں کو مکمل کیجیے

*

Mourining of Imam Hossein
haj 2018
We are All Zakzaky
telegram