سیرت زہراؑ ،دین و انسانیت کے تحفظ اور نسوان عالم کے فلاح و بہبود کا روح پرور اثاثہ

سیرت زہراؑ ،دین و انسانیت کے تحفظ اور نسوان عالم کے فلاح و بہبود کا روح پرور اثاثہ

حجۃ الاسلام والمسلمین آغا سید حسن الموسوی الصفوی نے کہا کہ حضرت زہراؑ کا سیرت و کردار دین و انسانیت کے تحفظ اور نسوان عالم کی فلاح و بہبود کا ایک روح پرور اثاثہ ہے۔

اہل بیت(ع) نیوز ایجنسی۔ابنا۔ سرینگر/شہزادی کونین حضرت فاطمۃ الزہراؑ کے یوم ولادت باسعادت کے موقعہ پر مسلم امہ کو ہدیہ تبریک و تہنیت پیش کرتے ہوئے انجمن شرعی شیعیان کے سربراہ اور سیئر حریت رہنما حجۃ الاسلام والمسلمین آغا سید حسن الموسوی الصفوی نے کہا کہ حضرت زہراؑ کا سیرت و کردار دین و انسانیت کے تحفظ اور نسوان عالم کی فلاح و بہبود کا ایک روح پرور اثاثہ ہے۔ رسول اسلامؐ نے اپنی صاحبزادی کو اپنے وجود کا جُز قرار دیکر امت مسلمہ کو جناب سیدہؑ کی عظمت و منزلت کا ادراک کرایا۔ سیدہ عالمؑ نے انتہائی مختصر زندگی میں عشق وعرفان الٰہی، زہد و تقویٰ ، قناعت و سخاوت اور صنف نازک کے تینوں بڑے کرداروں یعنی ماں، بیٹی اور زوجہ کے حوالے سے خدمت و ایثار اور تربیت کی درخشان تاریخ رقم کرکے عالم نسواں کیلئے سرمایہ افتخار قائم کیا جس سے استفادہ کئے بغیر خواتین ملت اپنے مقام و منزلت کی حفاظت نہیں کرسکتی۔ مرکزی امام باڑہ بڈگام میں بھاری جمعہ اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے آغا حسن نے کہا کہ حیا و حجاب خواتین کیلئے نہ صرف سپر کے مانند ہیں بلکہ یہی خواتین کا اصل زیور ہے۔ انہوں نے کہا کہ حیا و حجاب مسلم سماج کی شناخت کا سب سے نمایاں پہلو ہے لیکن اغیار کی تہذیبی جارحیت خواتین ملت سے حضرت زہراؑ کا یہ انمول تحفہ چھیننے میں مصروف عمل ہے۔ آغا حسن نے کہا کہ معصوم بچیوں کے ساتھ جنسی تشدد کے بعد قتل کرنے کی حالیہ وارداتوں نے پوری انسانیت کو سکتے میں ڈال دیا ہے۔ ایسے واقعات انسانیت کیلئے لمحہ فکریہ ہے۔ ان سانحات میں ملوث درندہ صفت انسانوں کو قرار واقعی سزا دلوانے میں روڑے اٹکانا انسانیت دشمنی کی انتہا ہے۔ یوم ولادت حضرت زہراؑ کی مناسبت سے تنظیم کے اہتمام سے کئی مقامات پر خصوصی تقاریب کا انعقاد کیا گیا جہاں علمائے دین نے جناب سیدہؑ کی سیرت و کردار کے مختلف پہلؤوں کی وضاحت کی۔ آغا حسن نے کسور کی زینب کے مجرم کو تلاشنے کیلئے حکومت پاکستان کی جنگی پیمانے پر مہم کوحکومت کی ذمہ داریوں کی تاریخ کا درخشان باب اور کٹھوعہ کی آصفہ کے معاملے میں ریاستی انتظامیہ کی بے حسی اور بے بسی کو عدلیہ کی تاریخ کا تاریک باب قرار دیتے ہوئے ایک بار پھر یہ مطالبہ دہرایا کہ آصفہ کیس کا سنجیدہ نوٹس لیکر انصاف کے تقاضوں کو پورا کیا جائے۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۲۴۲


اپنی رائے بھیجیں

آپ کا ای میل شائع نہیں ہو گا۔ * والی خالی جگہوں کو مکمل کیجیے

*

پیام امام خامنه ای به مسلمانان جهان به مناسبت حج 2016
We are All Zakzaky
telegram