تنازعہ کشمیر پر اقوام متحدہ کی ثالثی دونوں ممالک کے وسیع ترین مفاد میں: آغا حسن

تنازعہ کشمیر پر اقوام متحدہ کی ثالثی دونوں ممالک کے وسیع ترین مفاد میں: آغا حسن

آغا حسن نے کہا کہ برصغیر میں امن و خوشحالی اور تعمیر و ترقی کے ایک نئے دور کی شروعات ہند و پاک دوستی میں مضمر ہے اور ہندو پاک رشتوں کا محفوظ مستقبل تنازعہ کشمیر کے مستقل حل میں پوشیدہ ہے۔

اہل بیت(ع) نیوز ایجنسی۔ابنا۔ سرینگر/ تنازعہ کشمیر کے حل کیلئے اقوام متحدہ کی طرف سے ثالثی کی پیشکش کو برصغیر میں دیر پا امن و استحکام کیلئے عالمی ادارے کی ایک مخلصانہ خواہش قرار دیتے ہوئے انجمن شرعی شیعیان کے سربراہ اور سیئر حریت رہنما حجۃ الاسلام والمسلمین آغا سید حسن الموسوی الصفوی نے کہا کہ ثالثی کی یہ پیشکش صحیح سمت کی جانب قدم اور دونوں ممالک کے وسیع ترین مفادات میں ہے۔ آغا حسن نے کہا کہ برصغیر میں امن و خوشحالی اور تعمیر و ترقی کے ایک نئے دور کی شروعات ہند و پاک دوستی میں مضمر ہے اور ہندو پاک رشتوں کا محفوظ مستقبل تنازعہ کشمیر کے مستقل حل میں پوشیدہ ہے۔انہوں نے کہا کہ اگر بھارت تیسرے فریق کی ثالثی کوقبول کرنے پر آمادگی ظاہر کرتا ہے تو یہ ہندو پاک تعلقات اور خطے کے دیر پا امن و استحکام کیلئے ایک سنگ میل اور تاریخی پیش رفت ثابت ہوسکتی ہے۔ آغا حسن نے کہا کہ کشمیری قوم تنازعہ کشمیر کے پُرامن حل کی متمنی ہے تاکہ انہیں بھی ایک پُرامن اور غیر مخدوش ماحول میں جینے کا موقع فراہم ہوسکے کیونکہ کشمیری عوام کو بھارت اور پاکستان کے درمیان سات دہائیوں سے چلی آرہی مخاصمت اور کشیدگی کے منفی اثرات کا سب سے زیادہ شکار ہونا پڑرہا ہے، ایسے پریشان کُن حالات اور غیر یقینی صورتحال میں عالمی سطح پر تنازعہ کشمیر کے پُرامن حل کیلئے بلند ہورہی آوازیں کشمیریوں کیلئے انتہائی امید افزا ہے۔ آغا حسن نے امید ظاہر کی کہ اقوام متحدہ ثالثی کی پیشکش کے ساتھ ساتھ بھارت کو ثالثی قبول کرنے پر آمادہ کرنے کیلئے بھی اپنا موثر کردار ادا کرے گا۔ آغا حسن نے کٹھوعہ میں ایک معصوم بچی کے اغوا کے بعد موصوفہ کے درندانہ قتل کے سانحہ پر شدید رد عمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ اس طرح کا انسانیت سوز سانحہ بلا لحاظ مذہب و ملت تمام انصاف پسند طبقہ ہائے فکر کیلئے انتہائی جگرسوز ہے۔اس سانحہ کے حوالے سے تمام انصاف پسند حلقوں کی نگاہیں ریاستی انتظامیہ اور متعلقہ ایجنسیوں پر ٹکی ہوئی ہیں اور مذکورہ سانحہ پر پردہ ڈالنے کی مبینہ کوششیں ریاستی پولیس کی اعتباریت اور فرض شناسی پر ایک سوالیہ نشان ہوگا۔ انہوں نے مطالبہ کیا کہ موصوفہ کے درندہ صفت قاتلوں کو جلد از جلد گرفتار کرکے کیفر کردار تک پہنچایا جائے۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۲۴۲


اپنی رائے بھیجیں

آپ کا ای میل شائع نہیں ہو گا۔ * والی خالی جگہوں کو مکمل کیجیے

*

Quds cartoon 2018
We are All Zakzaky
telegram