پوٹن اور اردوگان کا ٹیلی فون پر رابطہ، شام امن مذاکرات پر تبادلہ خیال

پوٹن اور اردوگان کا ٹیلی فون پر رابطہ، شام امن مذاکرات پر تبادلہ خیال

ترک اور روسی صدور نے ایک ٹیلی فونک رابطے کے دوران شام امن مذاکرات کے حوالے سے آستانہ عمل کے تحت ہونے والی پیشرفت کو مثبت قرار دیا.

اہل بیت(ع) نیوز ایجنسی۔ابنا۔ ترک اور روسی صدور نے ایک ٹیلی فونک رابطے کے دوران شام امن مذاکرات کے حوالے سے آستانہ عمل کے تحت ہونے والی پیشرفت کو مثبت قرار دیا.

ترک صدر 'رجب طیب اردوگان' اور ان کے روسی ہم منصب 'ولادیمیر پوٹن' نے گزشتہ روز ٹیلی فونک پر رابطہ کیا اور اس موقع پر دونوں رہنماؤں نے شام کی تازہ ترین صورتحال پر تفصیلی گفتگو کی.

روسی ایوان صدر، کریملن کے مطابق، دونوں سربراہان مملکت نے آستانہ عمل کے تحت شام امن مذاکرات جس کی اب تک 6 نشستیں منعقد ہوچکی ہیں، کے حوالے سے مشترکہ تعاون پر اطمینان کا اظہار کیا.

پوٹن اور اردوگان نے آستانہ عمل کے تحت رواں مہینے کے آخر تک قازقستان کے دارالحکومت آستانہ میں منعقد ہونے والی شام امن مذاکرات کی 7ویں نشست پر بھی تبادلہ خیال کیا.

قازقستان کے دفترخارجہ کے بیان کے مطابق، آستانہ مذاکرات کا 7واں دور 30 اور 31 اکتوبر کے دن منعقد ہوگا جس میں شامی حکومت اور مخالفین کے علاوہ ایران، روس اور ترکی کے وفود بالخصوص اقوام متحدہ کے خصوصی ایلچی سمیت بعض ممالک کے نمائندے بطور مبصر شریک ہوں گے.

اس بیان میں کہا گیا ہے کہ آستانہ مذاکرات کے ساتویں دور میں قیدیوں کے تبادلے، لاپتہ افراد کی تلاش اور جھڑپوں میں مرنے والوں کے جسد خاکی کی حوالگی پر مذاکرات ہوں گے.

یاد رہے کہ اسلامی جمہوریہ ایران، روس اور ترکی کے مشترکہ تعاون سے شام امن مذاکرات سے متعلق اب تک مذاکرات کی 6 نشستیں منعقد ہوچکی ہیں.

شام کے مختلف علاقے بالخصوص ادلب، شمالی حمص، مشرقی غوطہ اور جنوبی علاقے میں امن زون کے قیام اس عمل کا ایک اہم نتیجہ ہے.

اس معاہدے کے تحت یہ تینوں ممالک شام میں ان چار امن زون کے قیام کے مقصد سے داعش اور النصرہ فرنٹ سمیت تمام دہشتگرد گروپوں کے خلاف جنگ کے لیے ضروری اور موثر اقدامات اٹھائیں گے.

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۲۴۲


اپنی رائے بھیجیں

آپ کا ای میل شائع نہیں ہو گا۔ * والی خالی جگہوں کو مکمل کیجیے

*

Mourining of Imam Hossein
haj 2018
We are All Zakzaky
telegram