مہدوی کلچر کی نشر و اشاعت میں میڈیا بنیادی کردار ادا کر سکتا ہے: آقائے اختری

  • News Code : 869973
  • Source : ابنا خصوصی
انہوں نے اس بات کو بیان کرتے ہوئے کہ دنیا میں مہدوی کلچر کی توسیع کی راہ میں میڈیا کا بہت بڑا کردار ہے کہا: مہدوی کلچر کی نشر و اشاعت کا ایک اہم طریقہ اس طرح کے موضوعات پر کانفرنسوں اور علمی نشستوں کا انعقاد ہے۔

اہل بیت(ع) نیوز ایجنسی۔ابنا۔ ’’مہدوی کلچر کی توسیع اور میڈیا‘‘ کے زیر عنوان تہران میں منعقدہ ایک کانفرنس کے دوران اہل بیت(ع) عالمی اسمبلی کے سیکرٹری جنرل حجۃ الاسلام و المسلمین محمد حسن اختری نے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ حضرت امام مہدی (عج) کی امامت کے دور میں پوری دنیا پر عدل الہی حاکمفرما ہو گا اور پوری دنیا اسی دور کی انتظار میں ہے۔
انہوں نے مزید کہا: آج کا سماج ایسا آئیڈیل سماج نہیں ہے جو ہمیں مہدویت کے مقصد کی طرف رہنمائی کر سکے۔ لہذا ہمیں ایسا سماج تشکیل دینے کی ضرورت ہے جس کے ذریعے ہم مہدوی کلچر کو متعارف کروا سکیں اور اس راہ میں میڈیا کا کردار سب سے اہم نظر آتا ہے۔
اہل بیت(ع) عالمی اسمبلی کے سیکرٹری جنرل نے اس بات کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہ پوری دنیا کی ۷ ارب آبادی میں ۳۶۰ ملین شیعہ ہیں جبکہ ساڑھے چھے ارب آبادی مہدویت کے موضوع سے ناآشنا ہیں۔ اس اعتبار سے ہماری یہ ذمہ داری ہے کہ ہم مہدوی کلچر اور مہدوی حکومت کے خد و خال سے دنیا کو آگاہ کرنے کے لیے دن رات زحمت اور محنت کریں۔
انہوں نے اس بات کو بیان کرتے ہوئے کہ دنیا میں مہدوی کلچر کی توسیع کی راہ میں میڈیا کا بہت بڑا کردار ہے کہا: مہدوی کلچر کی نشر و اشاعت کا ایک اہم طریقہ اس طرح کے موضوعات پر کانفرنسوں اور علمی نشستوں کا انعقاد ہے۔
انہوں نے کہا: آج انجیل اور توریت کو ۲ ہزار پانچ سو سے زیادہ زبانوں میں ترجمہ کیا جا چکا ہے لیکن ہم قرآن کریم کو ۱۵ زندہ زبانوں میں بھی ترجمہ نہیں کر سکے ہیں۔ اسی طرح نہج البلاغہ اور صحیفہ سجادیہ جو امام معصوم کا کلام ہے کو صحیح طریقے سے پہچنوا نہیں پائے ہیں۔
آقائے اختری نے تاکید کی کہ ہمیں اسلامی تعلیمات اور مہدوی کلچر کو دنیا کی زندہ زبان میں منتقل کر کے اس کی ترویج کرنا چاہئے۔ اسی طرح دنیا کے بڑے بڑے ذرائع ابلاغ میں اثر و رسوخ پیدا کر کے ان ذرائع سے اسلامی تعلیمات کو عام کرنے کی ضرورت ہے۔
انہوں نے مزید کہا: غیروں کا میڈیا اسلام مخالف سازشوں کے ذریعے مہدویت کے چہرے کو خدشہ دار کرنے میں جھٹا ہوا ہے۔ اسلام کو بدنام کرنے میں ان کا ایک کام یہ ہے کہ وہ تکفیری اور دھشتگرد ٹولیوں کی حمایت کرتے ہیں تاکہ ان کے ذریعے اسلام کو بدنام کروائیں ان سے مہدویت کے خلاف پروپیگنڈے کروائیں یہ لوگ خانہ خدا اور حرم رسول خدا(ص) سے حقیقی اسلام کی تعلیمات اور مہدوی کلچر کے خلاف تبلیغ کریں۔
انہوں نے کہا: دشمن کی سازشوں کا مقابلہ کرنے کے لئے ہمیں سائبری فضا سے لے کر اخباروں اور ٹی وی چینلوں تک ہر جگہ مہدوی کلچر کی نشر و اشاعت میں کوشاں رہنا چاہیے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۲۴۲


اپنی رائے بھیجیں

آپ کا ای میل شائع نہیں ہو گا۔ * والی خالی جگہوں کو مکمل کیجیے

*

پیام امام خامنه ای به مسلمانان جهان به مناسبت حج 2016
We are All Zakzaky
telegram