تیونس کے عوام نے صہیونی کشتی کو اپنے ملک میں آنے سے روک دیا

تیونس کے عوام نے صہیونی کشتی کو اپنے ملک میں آنے سے روک دیا

تیونس کے عوام کے شدید مظاہروں کے بعد اس ملک نے اسرائیلی کشتی کو اپنے پانیوں میں آنے سے روک دیا ہے۔ یہ کشتی تیونس کی بندرگاہ رادس پر لنگرانداز ہونا چاہتی تھی۔

اہل بیت (ع) نیوز ایجنسی ۔ ابنا ۔ کی رپورٹ کے مطابق اسرائیل کے خلاف پابندیاں لگانے والی بین الاقوامی آرگنائزیشن نے اعلان کیا ہے کہ تیونس کے عوام کے شدید اعتراض کے بعد اس ملک کی اتھارٹیز نے اسرائیلی کشتی کو تیونس کی سمندری حدود میں آنے سے روک دیا ہے۔ نیوز ایجنسی روسیا الیوم کی رپورٹ کے مطابق تیونس کے حکام نے اسرائیلی کشتی کو رادس بندرگاہ میں داخل ہونے سے روک دیا ہے۔ یہ کشتی زم نامی کمپنی کیلئے کام کر رہی ہے جس کے بارے میں بتایا گیا ہے کہ یہ صیہونی کمپنی ہے۔ تیونس کی حکومت جو مغرب نواز سمجھی جاتی ہے ملک میں ہونے والے شدید مظاہروں کی وجہ سے ایسے احکامات صادر کرنے پر مجبور ہوئی ہے۔

دوسری طرف صیہونی حکومت کی کمپنی لیو ہاعولام کے بانی ناتی روم نے کہا ہے کہ افسوس کے ساتھ کہنا پڑھتا ہے کہ ایسی اخبار کو سن کر اب کوئی تعجب محسوس نہیں ہوتا۔ ہماری دوسری کمپنیوں کی مانند اب زم کو بھی بین الاقوامی آرگنائزیشن کے اس اقدام کی وجہ سے بہت بڑا نقصان برداشت کرنا پڑے گا۔
.......

/169


اپنی رائے بھیجیں

آپ کا ای میل شائع نہیں ہو گا۔ * والی خالی جگہوں کو مکمل کیجیے

*

Arba'een
Mourining of Imam Hossein
haj 2018
We are All Zakzaky
telegram