• اربعین استعمار کے مقابلے میں شیعوں کی صدائے احتجاج ہے

    مساجد ایسوسی ایشن زنجان کے سیکرٹریٹ کے سربراہ نے مساجد اور ان سے ملحقہ اداروں میں اربعین کے پروگرامز کی وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ ان اداروں کے بعض اراکین زائرین کی خدمت کرنے کے لیے کربلا روانہ ہو چکے ہیں۔

    مزید ...
  • سعودی گٹھ بندھن جو کبھی حاصل نہیں ہو پائے گا

    سعودی عرب ایک ایسے گٹھ بندھن کے درپے ہے کہ جس کے ہدف غائی کو دیکھتے ہوئے مشرق وسطی کے آج کے سیاسی اور فوجی میدان کے کھلاڑیوں میں سے کوئی ایک بھی اس ترازو کے پلڑے کا کردار ادا کرنے کی صلاحیت نہیں رکھتا ۔

    مزید ...
  • سعودی معیشت کا ٹوٹتا بھرم

    یمن پر جنگ مسلط کرنے کے بہانے اپنا نیا پرانا اسلحہ فروخت کرنے، انتہائی مہنگے داموں سیٹلائٹ، انٹیلی جنس اور دیگر سروسز فراہم کرنے والے یہود و نصاریٰ اور سب سے بڑھ کر اپنی فوج کرائے پر دینے والے ممالک سعودی عرب کے حقیقی دوست نہیں بلکہ وہ مفاد پرست تاجر تھے، جو سعودی منڈی میں منہ بولی قیمت پر اپنی اپنی جنس فروخت کیلئے پیش کرتے رہے اور نوبت یہاں تک آن پہنچی کہ دنیا کو قرضے دینے والا سعودی عرب آج خود مقروض ہونے جا رہا ہے۔

    مزید ...
  • جذبہ حب الوطنی اور اسلامی اقدار كی حقيقی پاسبان " حزب الله لبنان"

    حزب الله كا اصلی دشمن اسرائيل ہے جس نے انكے ملک كے بعض حصوں ہر ابهی بهی قبضه كر ركها ہے. جب اسرائيل شام كی حدود ميں كهلم كهلا حملے كرے گا اور دهشتگردوں كوسپورٹ كريگااور مقاومت كو كمزور كرنےكى كوشش كرےگاتو حزب الله بهی اپنے قومي وملي مفادات كبلئےہر ميدان مين اترے گی.

    مزید ...
  • قندوز کا سقوط اور داعش و طالبان کی بحث

    اشرف غنی کی صدارت کے دور میں داعش کا شوشہ دنیا بھر میں اس لئے شہرت پاچکا تھا کہ طالبان پر سے توجہ ہٹائی جاسکے، لیکن ہم شروع سے بیان کرتے آئے کہ نام نئے آسکتے ہیں، لیکن یہی لوگ یہی کام انجام دیتے رہیں گے۔ سبھی یہ حقیقت پچھلے سال سے جان چکے ہیں کہ شام اور عراق میں بھی داعش میں وہ لوگ شامل ہوئے، جو امریکا نے گوانتانامو بے سے آزاد کئے اور جو ترکی کے راستے وہاں داخل کئے گئے۔ حتٰی کہ جون 2015ء میں میڈرڈ اسپین میں پولیس نے جن دہشت گردوں کو پکڑا، وہ بھی گوانتانامو جیل میں امریکا کے مہمان رہ چکے تھے۔ اکتوبر 2014ء میں امریکی وزیر دفاع ہیگل کا بیان آیا کہ انہیں علم ہے کہ داعش میں گوانتانامو جیل سے آزادہ کردہ افراد شامل ہو رہے تھے۔ اشرف غنی خود امریکی لابی سے تعلق رکھتے ہیں اور امریکا ہی کے خاص آدمی ہیں۔

    مزید ...
  • آل سعود کا حج سے وہابیت کی تبلیغ کا ناجائز فائدہ

    سعودیہ والے حج کے مراسم میں مسلمانوں کو پر امن موقعہ فراہم کرنے کے بجائے سر زمین حجاز پر اس سنہری موقعے سے وہابیت کی تبلیغ کی راہ میں فائدہ اٹھاتے ہیں ۔اور یہ ایسی حالت میں ہو رہا ہے کہ گذشتہ ۳۸ سال کے عرصے میں ۵۶۷۲ حاجی سعودیہ کی ناقص کار کردگی کی قربانی بن چکے ہیں ۔

    مزید ...
  • مساجد پر حملے نمازیوں کا قتل! داعش نے ایسا اسلام کہاں سے سیکھا ہے!

    داعش نے ایسا اسلام کہاں سے سیکھا ہے کہ جو نہ جمعہ کو عید سمجھتا ہے اور نہ اللہ کے گھر کے لیے کسی احترام کا قائل ہے نہ حج فقرا اس کے نزدیک کسی اہمیت کا حامل ہے اور نہ ہی ماہ مبارک رمضان کا اس کے ہاں کوئی احترام ہے؟!

    مزید ...
  • مشرق وسطیٰ کی موجودہ خونچکاں صورتِ حال اور مسلۂ فلسطین

    اسرائیل کی میلی آنکھ اگر حرم پاک پر ہے تو عالمِ اسلام کو اپنے تمام مسائل کے حل کی خاطر آزادی قدس کو اپنی توجہ کا مرکز بنانا ہوگا۔ اور ان تمام سازشوں سے آگاہ رہنا ہوگا۔ جن سے صیہونیت نے عالمِ اسلام کو قوم پرستی، نسل پرستی اور مسلکی منافرت کے مختلف سرد خانوں میں جامد اشیا کی طرح رکھا ہے۔

    مزید ...
  • دہشتگردی اور غافل حکمران

    دنیا بھر میں ریاست کی قوت کو منوا لینا اولین ترجیح ہوتا ہے۔ ریاست کے خلاف ہتھیار اٹھانے والوں کو باغی تصور کیا جاتا ہے، ان کا سر کچلنے کے لئے کسی قسم کی مصلحت کوشی اختیار نہیں کی جاتی، پاکستان واحد ملک ہے جہاں حکمران دوراندیش فیصلوں میں مجرمانہ غفلت کا ارتکاب کرتے ہیں۔ حکومتی اشرافیہ میں دہشت گردوں کے سرپرستوں کا ہونا پاکستان کے لئے نہایت خطرناک بات ہے۔ جب تک ہم اپنی صفوں میں موجود کالی بھیڑوں کو نکال باہر نہیں کریں گے، ہم استحکام پاکستان کی منزل حاصل نہیں کرسکتے۔

    مزید ...
  • قانا پر صہیونی جارحیت اور عالم اسلام کی خاموشی پر حیرانگی

    غاصب صہیونی حکومت نے گیارہ اپریل 1996 کولبنان کے مختلف علاقوں پر اپنے بری، بحری اور ہوائی حملے شروع کیے تھےا۔ دریں اثنا غاصب صہیونی حکومت نے 18 اپریل 1996 کو لبنان میں قانا کےعلاقے کو اپنے وحشیانہ تشدد کا نشانہ بنایا۔

    مزید ...
  • یوکرین کے بحران سے ایران کو بھی کوئی فائدہ؟

    یوکرین کے بحران کے کچھ ہفتے بعد کہ جس سے روس اور مغرب اور خاص کر امریکہ کے مفادات میں تقابل شروع ہو گیا ہے ،اب یورپین یونین کی طرف سے روس پر پابندیوں کے بارے میں سنجیدگی کے ساتھ غور ہونے لگا ہے ،وہ پابندیاں جو یوکرین میں بحران کے ساتھ ایرانی مفادات کے لیے مفید ثابت ہوں گی ۔

    مزید ...
  • روہنگیا مسلمانوں کے ساتھ امتیازی برتاو کا سلسلہ جاری

    میانمار کے انتہاپسند بڈھسٹ گزشتہ دو برسوں سے کسی روک ٹوک کے بغیر راخین کے مسلمانوں پر حملے کررہے ہیں۔ جس کے نتیجے میں سیکڑوں مسلمان مارے جاچکے ہیں ، ہزاروں گھروں کو نذر آتش کیا جا چکا ہے اور کئي ہزار مسلمان اپنا گھر بار چھوڑنے پر مجبور ہو چکے ہیں۔

    مزید ...
  • امریکی صدر کا دورہ سعودی عرب

    امریکی صدر آج کل سعودی عرب کے دورے پر ہیں جہاں انہوں نےسعودی فرمانروا عبداللہ بن عبدالعزیز سے ملاقات کی ہے امریکی صدر کی شاہ عبداللہ سے ملاقات میں اوباما کے ساتھ سیکرٹری خارجہ جان کیری اور نیشنل سکیورٹی ایڈوائزر سوسن رائس بھی موجود تھے۔

    مزید ...
  • آل سعود کی سرکوبی کی پالیسیاں

    سعودی عرب میں اس ملک کے عوام اپنے حقوق اور آل سعود کی حکومت کی جانب سے بدستور انسانی حقوق کی پامالی اور 2نوجوانوں کی سکیورٹی فورسز کے ہاتھوں قتل کے خلاف سراپا احتجاج ہیں۔

    مزید ...
  • طالبان کی خونی کارروائیاں اور امن مذاکرات کا مستقبل!!!

    حال ہی میں تحریک طالبان کے بطن سے ایک نیا گروپ سامنے آیا ہے، جو احرارالہند کے نام سے کام کر رہا ہے۔ اس گروہ نے اعلان کیا ہے کہ طالبان مصلحت اور قبائلی علاقوں کی آزادی کیلئے مذاکرات کی میز پر بیٹھ گئے ہیں، جبکہ ہم اس ملک کے چپے چپے پر شریعت کے نفاذ تک اپنی فدائی کارروائیاں جاری رکھیں گے۔ احرارالہند نے اعلان کیا ہے کہ طالبان ان کے بھائی ہیں، تاہم وہ شریعت کے نفاذ تک کسی کے ساتھ مذاکرات کی میز پر نہیں بیٹھیں گے۔ اس گروہ نے اعلان کیا ہے کہ جب تک ملک میں مکمل طور پر شریعت نفافذ نہیں ہوجاتی وہ اپنے حملے جاری رکھیں گے۔

    مزید ...
  • اتحاد امت قاضی حسین احمد کی نظر میں

    قاضی حسین احمد مرحوم نہایت منصفانہ اور عادلانہ طرز فکر کے حامل انسان تھے۔ اگر کونسل کے کسی اجلاس میں اتفاقاً کسی جماعت کی کم نمائندگی ہوتی یا فریق مخالف اپنے عددی اکثریت کی بنا پر اپنے نظریات یا عقائد کو دوسروں پر مسلط کر رہا ہوتا تو قاضی صاحب مرحوم فی الفور مداخلت کرتے اور یہ کہہ کر روک دیتے کہ ہم یہاں قدر مشترک اور درد مشترک پر جمع ہوئے ہیں، ہمیں اختلافی مسائل میں نہیں پڑنا۔

    مزید ...
  • سلفیت: نئے لیڈر کی تلاش میں

    اپنے دور کے بڑے استعمار برطانیہ نے اپنی مسلم مقبوضات کے اندر بہت سے انحرافی گروہوں کو تشکیل دیا۔ ان میں سے ایک گروہ ہندوستان کے اندر قادیانیت کے نام سے بنایا، ایران کے اندر بہائیت اور حجاز میں (سعودی عرب) وہابیت کو بنایا۔ یہ تینوں انحرافی گروہ آج مسلم دنیا کے اندر فساد کی بنیادی وجہ بنے ہوئے ہیں۔ تیل کی دریافت سے پہلے سلفی تفکر کا ہمارے ہاں کوئی وجود نہیں تھا۔ سعودی عرب تنہا ہو رہا ہے۔ اس کے ہاتھوں سے یہ تمام سلفی دہشت گرد گروہ تشکیل کرائے گئے ہیں۔

    مزید ...
  • صہیونی ریاست کی توسیع پسندی میں شدت

    امریکی وزیر خارجہ جان کیری کے مشرق وسطی کے دورے کے موقع پر صہیونی ریاست کے جنگ پسندانہ اور توسیع پسندانہ اقدامات میں شدت پیدا ہوگئي ہے۔ اس سلسلے میں صیہونی حکام نے مغربی کنارے میں واقع درۂ اردن میں ایک صہیونی بستی کی تعمیر کا افتتاح کیا ہے۔

    مزید ...
  • خلیج فارس کے ممالک کی گفتار اور کردار میں فرق

    ایسا معلوم ہوتا ہے کہ خلیج فارس کے علاقے کے عرب ممالک صرف بیان جاری کرنے میں متحد ہیں، اور عمل میں ہرایک کا الگ ساز بجاتا ہے اور اس مسئلہ کا علاقے میں رونما ہونے والی تبدیلیوں کے حوالے سے ان ممالک کے مختلف رویوں سے بخوبی مشاہدہ کیا جاسکتا ہے۔

    مزید ...
  • ہمارے حکمران استعمار کے دوست اور امریکی مفادات کے محافظ ہیں، مولانا یحیٰی

    اہلحدیث عالم دین مولانا یحیٰی کا اسلام ٹائمز کو خصوصی انٹرویو دیتے ہوئے کہنا تھا کہ گلگت بلتستان میں امریکی تنظیموں کی سرگرمیاں مستقبل کے لیے خطرناک ثابت ہو سکتی ہیں کیونکہ یہ علاقہ حساس سرحدی علاقہ ہونے کے ساتھ ساتھ دین دار بھی ہے۔ لہٰذا یہاں غربت کے خاتمے کے آڑ میں بےدینی اور فحاشی پھیلانے کا شدید خطرہ ہے بلکہ اس کے آثار نظر آ رہے ہیں۔

    مزید ...
  • امریکہ دنیا کی سب سے بڑی قانون شکن حکومت (حصہ دوم )

    میرا خیال ہے کہ امریکی حکومت کے پاس اب بھی وقت ہے کہ وہ سنبھل جائے۔ اپنی اصلاح کرے اور دنیا بھر میں کھولے گئے محاذوں کو بند کر کے اپنے ملک کے عوام کی خدمت کرے۔ اسے سوویت یونین کے انجام سے عبرت حاصل کرنی چاہیئے کیونکہ ہر گذرتا ہوا لمحہ امریکہ کی نابودی کو قریب لا رہا ہے۔ دنیا کے مظلوم اور مستضعفین کی حکومت کا وقت شروع ہو چکا ہے۔

    مزید ...
  • امریکہ دنیا کی سب سے بڑی قانون شکن حکومت (حصہ اول)

    آج امریکہ جس بات کا سب سے زیادہ پرچار یا پروپیگنڈا کرتا ہوا نظر آتا ہے وہ القاعدہ اور طالبان ہیں۔ یعنی وہ قوتیں جن کو کل تک امریکہ نے پوری دنیا میں دندنانے کی آزادی دے رکھی تھی اور اپنا ہیرو قرار دیا تھا، آج دنیا کے وسائل پر قابض ہونے کی غرض سے انہی اپنے پرانے دوستوں کو امن کے لئے خطرہ قرار دیتا ہے۔ جہاں چاہتا ہے اس ملک میں فوجی چڑھائی کر دیتا ہے اور پھر اس کے بعد بہیمانہ طریقے سے وہاں کے عوام کا قتل عام کرتا ہے۔

    مزید ...
Mourining of Imam Hossein
پیام امام خامنه ای به مسلمانان جهان به مناسبت حج 2016
We are All Zakzaky
telegram