اہل بیت(ع) نیوز ایجنسی ’’ابنا‘‘ کا تعارف

ایران میں میڈیا کے سلسلہ میں ایک نئے زاویہ نگاہ اور خاص رجحان کے وجود میں آنےاور عمومی نیوز ایجنسیوں کے ساتھ ساتھ خصوصی نیوز ایجنسیوں کی تشکیل کے بعداہل بیت نیوز ایجنسی ’’ابنا‘‘کی بنا رکھی گئی تاکہ مکتب تشیع سے متعلق خبروں نیز دنیا میں رونما ہونے والے ان واقعات کی خبروں کو عام کیا جائے کہ جن میں شیعوں کا بنیادی کردار ہوا کرتا ہے۔
تمہید
اہل بیت علیہم السلام کے پیروکار اپنے مظلوم پیشواؤں کے مانند تاریخ میں ہمیشہ ظلم و ستم کا شکار رہے ہیں۔بنی امیہ ،بنی عباس اور نظام ہجری کی درمیانی صدیوں کے علاوہ دور حاضر کے ماڈرن اور پیشرفتہ دور میں بھی یہ ظلم و زیادتی کا سلسلہ اسی آب و تاب کے ساتھ باقی ہے۔
اس مظلومیت اور روز بروز اس میں اضافہ کی ایک بڑی وجہ ’’شیعوں کی ایک دوسرے سے بے خبر ی‘‘ اور ان پر ہونے والے ظلم و ستم سے ’’بین الاقوامی اداروں کی ناواقفیت‘‘ ہے۔اس لئے کہ سوشل میڈیا اور ذرائع ابلاغ ایسے حکام اور صاحبان قدرت کے قبضہ میں ہیں جو ’’خالص محمدی اسلام‘‘ کے خلاف مورچہ بنائے ہوئے ہیں۔
اسلامی جمہوریہ ایران میں بھی متعدد نیوز ایجنسیوں،خبری ویب سائٹوں اور جرائد کے ہوتے ہوئے بھی ایک ایسی نیوز ایجنسی کی کمی کا احساس ہوا جو خصوصی طور پر مذہب تشیع اور اہل بیت علیہم السلام کے پیروکاروں سے متعلق خبروں کو دنیا بھر میں عام کرے۔
اہل بیت عالمی اسمبلی کے حالیہ جنرل سیکریٹری حجۃ الاسلام والمسلمین جناب محمد حسن اختری کے دور میں اسمبلی کے ذمہ داران نے ان حالات کی نزاکت کو سمجھتے ہوئے اس خلا کو پُر کرنے کی غرض سے تین زبانوں میں ایک خبری ویب سائٹ کا قیام کیا۔
فضل خدا اور معصومین علیہم السلام کی عنایات کے زیر سایہ یہ ویب سائٹ آہستہ آہستہ اور معقول انداز میں ترقی کی منزلوں کو طے کرتی رہی اور اب اس وقت مستقل طور پر سرگرم عمل ایک نیوز ایجنسی کی صورت اختیار کر چکی ہےجس میں تجربہ کارایڈٰٹوریل بورڈ اور اندرونی اور بیرونی نامہ نگاراپنا اہم کردار ادا کر رہے ہیں۔یہ نیوز ایجنسی جو دنیا کی بیس مختلف زندہ زبانوں پر مشتمل ایک نہایت مؤثر ویب سائٹ ہے چند مراحل سے گزری ہے:
پہلا مرحلہ؛پہلا قدم
اہل بیت نیوز ایجنسی [ابنا]’’شیعہ نیوز کی خبری اور تجزیاتی ویب سائٹ کی ترقی یافتہ شکل ہے جو ماضی میں www.shianews.ir اور www.shianews.org ڈومین کے تحت مصروف عمل ہوا کرتی تھی۔
یہ سائٹ۱۴ مارچ ۲۰۰۵ میں اہل بیت (ع)عالمی اسمبلی کے بین الاقوامی امورکے شعبہ سے وابستہ افراد کی جد و جہد کے نتیجہ میں منظر عام پر آئی اور اس نے تین زبانوں یعنی فارسی،عربی اور انگلش میں اپنا کام شروع کیا۔
دوسرا مرحلہ؛منتقلی
سنہ ۲۰۰۷ کے موسم گرما میں اس ویٹ سائٹ کی نئی انتظامیہ نے سائٹ کا ایک نیا خاکہ پیش کیا۔اس مرحلہ میں یہ ویب سائٹ ’’شیعوں کی خبریں‘‘عنوان کے تحت مصروف عمل ہوئی اور بعض دیگر موضوعات کا اس میں اضافہ کیا گیا۔
تیسرا مرحلہ:اہل بیت(ع) نیوز ایجنسی۔ابنا
جس وقت مذکورہ ویب سائٹ نے خبری حلقوں میں اپنا مقام پا لیا اور ایران اور دنیا کی شیعہ برادری نے اس کا استقبال کیا تو اس بات کی ضرورت محسوس ہوئی کہ اس ویب سائٹ کو ایک نیوز ایجنسی کے طور پر کام کرنا چاہئے۔
سنہ۲۰۰۸میں اس نئے مرحلہ کا آغاز ہوا اور اسلامی جمہوریہ ایران کے صدر کے ہاتھوں اس ایجنسی کا باضابطہ طور پر اجرا عمل میں آیا اور اس خبری اورتجزیاتی ویب سائٹ نے www.abna.ir ڈومین کے تحت ’’اہل بیت (ع)نیوز ایجنسی۔ابنا‘‘ کے طور پر باقاعدہ اپنے کام کا آغاز کیا۔اس وقت ’’صادق رمضانی گل افزانی‘‘ چیف ایڈیٹر اور ’’سید علی رضا حسینی‘‘(عارف) اس کے ایڈیٹر تھے۔اس کے بعدسنہ ۲۰۱۰ میں حسینی عارف صاحب چیف ایڈیٹر ہونے کے ساتھ ساتھ ویب سائٹ کے ایڈیٹر بھی قرار پائے۔
۱۷ ستمبر ۲۰۱۲ میں اہل بیت(ع) نیوز ایجنسی کو ایران کی وزارت برائے ثقافت و ہدایت سے قانونی طور پر لائیسنس حاصل کرنے میں بھی کامیابی ملی۔
ABNA در حقیقت Ahle Bait News Agency کا مخفف ہے جو اس وقت abna24.com ڈومن کے تحت کام کر رہی ہے اور فی الحال حجۃ الاسلام و المسلمین سید علی رضا حسینی عارف صاحب اس کے CEO ہیں۔اس ایجنسی کا پروپرائیٹر اہل بیت(ع) عالمی اسمبلی سے وابستہ ’’ابناء الرسول آرٹ اینڈ کلچر فاؤنڈیشن‘‘ ہے۔
اسلامی اتحاد کے تحفظ کے ساتھ ساتھ تشیع کا دفاع
اگرچہ اہل بیت(ع) نیوز ایجنسی کے وجود میں آنے کا بنیادی ہدف اہل بیت علیہم السلام کے پیروکاروں پر سے غبار مظلومیت کا ازالہ تھا لیکن اس کے باوجود ہمیشہ اسلام کے بنیادی اصول و اہداف کا پاس و لحاظ رکھاہے۔ان اہداف میں سے ایک اہم ترین اصول و ہدف مختلف ادیان و مذاہب کے پیروکاروں کا احترام اور اسلامی اتحاد کا تحفظ ہے۔
اہل بیت(ع)نیوز ایجنسی(ابنا) کی زبانیں
اس وقت ابنا نیوز ایجنسی دنیا کی ۲۰ زبانوں میں مصروف عمل ہے جو مندرجہ ذیل ہیں:فارسی،انگلش،عربی، فرانسیسی،چینی، اسپینش،جرمن، روسی، استامبولی، ترکی،آذری ترکی(لاطینی اور سریلیک رسم الخط کے ساتھ)، اردو،بنگلا، مالایو، ہندی، انڈونیشین،سواحلی،بوسنیائی،ہوسا اور میانماری۔
ثقافتی صفحات
’’ابنا ‘‘ ابتدا سے ہی اپنے بنیادی فرض یعنی خبروں سے با خبر کرنے کے ساتھ ساتھ ’’سبز صفحے‘‘ عنوان کے تحت کچھ دینی اور ثقافتی صفحات کو بھی اپنے مخاطبین اور ویزیٹرس کے خدمت میں پیش کرتی رہی ہے۔یہ صفحات خبروں کے برخلاف کسی خاص وقت سے مخصوص نہیں ہوتے۔
ان صفحات کے بعض عناوین مندرجہ ذیل ہیں:
قرآن،حدیث اور ان سے متعلق مسائل، پیغمبر اور اہل بیت علیہم السلام کی سیرت طیبہ،ولایت کے ہمراہ، مقالہ، تقاریر، انٹرویو، میں کیوں شیعہ ہوا؟، اہل بیت علیہم السلام کے ناصرین،مہدویت، پردہ اور خوبصورتی، وہابیت کی شناخت، صہیونیت کی شناخت، دیگر ادیان اور مکاتب فکر، شعر و ادب، مذہبی اس ام اس، ابنا اور قارئین۔
انعامات
اہل بیت (ع)نیوز ایجنسی ۔ابنا۔ نے اپنی مختصر سی سرگرمیوں کے دوران مختلف بین الاقوامی،قومی اور علاقائی نمائشوں اور فیسٹیولوں میں شرکت کی جس میں اس نے تین انعامات حاصل کئے:
۱۔سنہ ۲۰۱۲ میں پریس اور نیوز ایجنسیوں کی انیسویں بین الاقوامی نمائش میں ’’ممتاز نیوز ایجنسی‘‘ کا انعام۔(نومبر ۲۰۱۲)
۲۔پہلے اشراق فلم فیسٹیول میں ’’ممتاز نیوز ایجنسی‘‘ کا انعام۔(جون ۲۰۱۲)
۳۔ڈیجیٹل میڈیا کے چھٹے بین الاقوامی فیسٹیول کی ’’منتخب نیوز ایجنسی‘‘۔(جنوری ۲۰۱۳)

ابنا کے ساتھ رابطہ


مرکزی دفتر کا فون نمبر: 32131323 ـ 025
مرکزی دفتر کا فیکس نمبر: 32131258 ـ 025
مرکزی دفتر کا پتہ:ایران،قم،بلوار جمہوری اسلامی،گلی نمبر ۶،اہل بیت عالمی اسمبلی،دوسری منزل،ابنا نیوز ایجنسی کا دفتر۔
تہران میں دفتر کا پتہ:تہران،بلوار کشاورز،قدس روڈ کے کونے پر،اہل بیت عالمی اسمبلی،تیسری منزل، انفارمیشن آفس۔
اردو شعبہ کا ایمیل:abna.urdu@yahoo.com, abnaurdu110@gmail.com۔
مرکزی دفتر کا ایمیل: akhbareshia@yahoo.com